برسوں کا سفر،لمحوں میں مکمل

برسوں کا سفر،لمحوں میں مکمل
 برسوں کا سفر،لمحوں میں مکمل
کیپشن: pic

  


دنیا کے ترقی یافتہ ملکوں کی کشادہ شاہراہ پر چلتی میٹرو بسیں اور دور دراز فاصلوں کو سمیٹتے انڈر پاسز اور فلائی اوور ز جو چند سال پہلے تک اہل وطن کا خیال،خواب اور حسرت تھے، آج نہ صرف حقیقت کا روپ دھار چکے ہیں، بلکہ ہر خاص و عام ان کے ثمرات سے مستفید ہو رہا ہے۔ ملکی ترقی اور قومی خوشحالی کے لئے ان منصوبوں کی افادیت اور آئندہ نسلوں کے لئے ان کی اہمیت اپنی جگہ، جوبات ان منصوبوں کو ماضی کے منصوبوں سے ممتاز کرتی ہے وہ ان کی شفافیت کے ساتھ کم سے کم مدت میں بروقت اور معیاری تکمیل ہے ۔

برسوں کا سفر،لمحوں میں مکمل۔ اگر کوئی اس تخیل کی حقیقت دیکھنا چاہتا ہے تو صوبہ پنجاب اور بالخصوص شہر لاہور میں مکمل شدہ اور زیر تکمیل ترقیاتی منصوبوں پر جاری کام کی رفتار اور معیار کو دیکھے‘ انجینئرنگ کا شاہکار انتہائی پیچیدہ منصوبے مکمل کرنے کے لئے کوئی مافوق الفطرت مخلوق کام نہیں کر رہی، بلکہ زمین بھی وہی ہے ‘ لوگ بھی وہی ہیں اور صبح شام بھی وہی ہیں فرق صرف قیادت کا ہے، جس نے ان کے دلوں میں مقصد سے لگن اور کچھ کر دکھانے کی تڑپ پہلے سے کہیں زیادہ کر دی ہے ۔ان منصوبوں کی خصوصیت یہ ہے کہ ان کے لئے وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف کی ہدایت پر ہفتے بھر کے سات دنوں کے 24گھنٹے کام کرنے کا کلچر متعارف ہوا، جو ہر طرح کے موسم کی شدت کے با وجود جاری رہتا ہے اور حتیٰ کہ عید ین کے مواقع پر بھی نہیں رُکتا تا کہ شہریوں کو زیادہ دیر ان کی وجہ سے مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ اس کی سب سے بڑی مثال لاہور میٹروبس کامنصوبہ ہے۔یہ پاکستان کا پہلا ماس ٹرانزٹ پراجیکٹ تھا، جس کی پاکستان میں پہلے کوئی مثال نہ تھی، کیونکہ اس طرح کا کوئی منصوبہ اس سے پہلے ہمارے ملک میں کبھی شرو ع ہی نہیں کیا گیا ۔ لاہور میٹرو بس کا تکمیل شدہ پراجیکٹ نہ صرف آج لاہور کی پہچان بن چکا ہے، بلکہ یہ دوسرے شہروں کے لئے بھی ایک نمونہ قرار پا چکا ہے اور حکومت راولپنڈی اسلام آباد کے بعد جلد ہی ملتان اور فیصل آباد میں بھی میٹرو بس کے منصوبے شروع کر رہی ہے ۔

ترقی کی شاہراہ پر ایک اور قدم بڑھاتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب میاں محمد شہباز شریف کی ہدایت پر لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی نے ڈائریکٹر جنرل احد خان چیمہ کی زیر نگرانی صرف165دن کی مختصر مدت میں آزادی چوک سگنل فری جنکشن اورنیو سرکلر روڈ کی تعمیر کے منصوبے مکمل کر لئے، جن پر مجموعی طور پر پانچ ارب 35کروڑ روپے لاگت آئی ہے۔ وزیراعلیٰ پنجاب میاں محمد شہباز شریف نے گزشتہ روز اس منصوبے کا افتتاح کر دیا ہے۔ احد خان چیمہ کو پاکستان کا پہلا میٹرو بس منصوبہ 11ماہ کی ریکارڈ مدت میں مکمل کرنے کا اعزاز حاصل ہے ۔ عوامی خدمت کے شعبے میں ان کی خدمات کے اعتراف کے طور پر حکومت پاکستان انہیں تمغہ امتیاز سے نواز چکی ہے ۔ان کی قیادت میں ان کی انتھک کوششوں‘ جواں ہمت اور دیانتداری کے نتیجے میں میٹرو بس سسٹم کا خیال حقیقت میں تبدیل ہوا ۔ تعمیر کا یہ شاہکارعام آدمی کی مشکلات کم کرنے اور پاکستان کے ٹرانسپورٹ کلچر میں تبدیلی لانے کے سلسلے میں اہم کردار ادا کر رہا ہے ۔اس کے نتیجے میں لوگوں کو سفر کے لئے درکار وقت میں کمی اور ان کی طرف سے ایندھن پر خرچ کی جانے والی رقم کی بچت ہو رہی ہے ۔

آزادی چوک سگنل فری جنکشن کے منصوبے پر کام کا آغاز اس سال 15جنوری کو کیا گیا، جو چار ارب روپے کی لاگت سے29جون تک مکمل کر لیا گیا ۔ راوی روڈ پر ٹریفک کی روانی کے لئے تعمیر کئے گئے سگنل فری جنکشن میں ایک فلائی اوور اور ایلی ویٹڈ گول چکر تعمیر کیا گیا ہے ۔ فلائی اوور ٹکسالی گیٹ کے قریب سے شروع کر کے ٹمبر مارکیٹ تک تعمیر کیا گیاہے ۔اس کے ذریعے داتا دربار،شاہدرہ اور ٹمبر مار کیٹ سے سرکلر روڈ کی طرف آنے والی ٹر یفک اب مولانا احمد علی روڈ پرآکر لاری اڈا چلی جا ئے گی۔ انٹرچینج کی مجموعی لمبائی2.53کلومیٹر ہے۔ اس منصوبے کی تکمیل سے روزانہ 2لاکھ گاڑیوں کو فائد ہ پہنچے گا اور سالانہ 90کروڑ روپے کے ایندھن کی بچت ہوگی۔

نیو سر کلر روڈ کا منصوبہ 1ارب 35کروڑ روپے کی لاگت سے مکمل کیا گیا ہے ۔اس سڑک کی کل لمبائی 1.6 کلومیٹر ہے۔ اس دوریہ سڑک کی ہر سائیڈ14.7 میٹر چوڑی ہے ۔ہر سائیڈ 4‘4لین پر مشتمل ہے ۔ ہر لین کی چوڑائی 3.3میٹر ہے ۔ اس پر ایک گول چکر اور 2یو ٹرن بھی بنائے گئے ہیں۔ نئی سر کلر روڈ مینار پاکستان کی شمالی جانب واقع راوی روڈ پر مولانا احمد علی روڈ سے شر وع ہو کر مینار پا کستان جھیل کے مقام سے گزرتے ہوئے اقبال پار ک میں قائم سپور ٹس کمپلیکس سے ہو کر لاری اڈہ سے با دامی با غ سے مستی گیٹ کی طرف نکل کر سرکلر روڈ سے ملا دی گئی ہے ۔

وزیراعلیٰ پنجاب میاں محمد شہبازشریف نے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آزادی چوک کا یہ منصوبہ صرف 6 ماہ کی قلیل مدت میں مکمل ہوا، جس سے نہ صرف عوام کو بہترین سفری سہولتیں میسر ہوں گی، بلکہ قیمتی وقت بھی بچے گا اور میٹروبس بھی یہاں سے وقت ضائع کئے بغیر گزرے گی۔ انہوں نے کہا کہ آزادی چوک منصوبہ لاہور کی خوبصورتی اور حسن میں اضافے کی تکمیل کے ساتھ ساتھ معاشی ترقی میں بھی اہم کردار ادا کرے گا اور اس منصوبے کی تکمیل سے ہم علاقے میں عظیم قومی یادگاروں بادشاہی مسجد، شاہی قلعہ اور مینار پاکستان کو ماحولیاتی آلودگی سے محفوظ کرنے کے بھی قابل ہو جائیں گے۔ لاہور زندہ دل لوگوں کا شہر ہے، جسے پاکستان کا ثقافتی دارالحکومت اور ایشیا کا دل ہونے کا اعزاز حاصل ہے۔ اسے ہم سب نے مل کر خوبصورت پارکوں‘ باغوں اورپھولوں کا شہر بنانا ہے۔ ماضی میں بھی ہم نے لاہور کو خوبصورت اور دلکش بنانے کے لئے خصوصی اقدامات کئے۔ آج بھی پنجاب کے عوام کو تعلیم، صحت، ٹرانسپورٹ، صفائی، معاشی اور تجارتی سرگرمیوں کے فروغ کے لئے بہترین انفراسٹرکچر حکومت پنجاب کی اولین ترجیح ہے۔

مزید :

کالم -