نیک نیتی سے کام کر رہے ہیں ،مستعفی ہونے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ،وزیر اعظم

نیک نیتی سے کام کر رہے ہیں ،مستعفی ہونے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ،وزیر اعظم ...

  

                                       چکوال(اے این این) وزیر اعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ حکومت نیک نیتی سے فرائض سرانجام دے رہی،مستعفی ہونے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا،یہاں ڈالر کی قیمت پر استعفے کی شرط لگا کر مکر جانے والے کس منہ سے حکومت سے استعفے کا مطالبہ کر رہے ہیں،14اگست کو کسی کو ملک میں افراتفری پھیلانے کی اجازت نہیں ہوگی ،دنیا ہمارے کاموں کی معترف ہے،ورثے میں ملے مسائل راتوں رات حل نہیں ہونگے اس میں وقت لگے گا،بجلی بحران ختم کر کے دم لیں گے، لوڈ شیڈنگ کے معاملے پر پہلی بار سنجیدگی سے کام ہو رہا ہے،ایک دن ضرور بجلی زیادہ اور سستی ہوگی،ہم4سال میں ملک کو خوشحال بنائیں گے،ہر جگہ امن کا دور دورہ ہو گا،شہری راتوں کے سفر میں بھی خوف محسوس نہیں کریں گے۔ان خیالات کا اظہار انھوں نے چکوال مندرہ روڈ کا سنگ بنیاد رکھنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا،انھوں نے کہا کہ میں اپنی تقریر کا آغاز راجہ جاوید اخلاص کی تقریر میں استعفے کے ذکر سے کرونگا کہ جن لوگوںنے استعفی دینے کا اعلان کیا تھا وہ آج اپنے استعفی دینے سے مکر گئے ہیں بلکہ ہمیں کہہ رہے ہیں کہ استعفی دیں،مجھے اس موقع پر غالب کا شعر یاد آرہاہے۔”یہ مسائل تصوف ،کہ تیرا بیان غالب،”تجھے ہم ولی سمجھتے،جوناباداخار ہوتا“۔نواز شریف نے کہا ہم استعفی کیوں دیں ہمیں تو دنیا مبارکباد دے رہی ہے کہ ڈالر 100 سے بھی نیچے آگیا ہے۔انہوںنے کہاکہ مجھے آج وہ منظر نظر آرہا ہے جو ایک سال پہلے تلہ گنگ میں آکر میں نے دیکھا تھا، عوام نے ہمیں بڑے محبت اور خلوص سے ووٹ دیا، چکوال اور تلہ گنگ کے عوام کے جذبات کوکبھی نہیں بھول سکتا،آج میں جس کام کے لئے آیا ہوں یہ بہت چھوٹی سی یہاں کے عوام کی خدمت ہے،میں یہاں کے عوام کی بڑی خدمت کرناچاہتا ہوں، میں چاہتا ہوں کہ یہاں خوشحالی آئے، انشاءاللہ وقت کے ساتھ پاکستان کے چپے چپے میں خوشحالی آئے گی۔انہوںنے کہاکہ عوام نے ہمیں ووٹ کے ذریعے منتخب کیا اور ملک کی ترقی کا فرض سونپا، ہم نیک نیتی کے ساتھ اپنا فرض ادا کررہے ہیں،کوئی شک نہیں دشواریاں بہت ہیں، ہم حکومت میں آئے تو بے پناہ مسائل ورثے میں ملے، خزانہ خالی تھا،توانائی بحران اور دیگر مسائل موجود تھے، ان کو ٹھیک کرنے کے لئے وقت درکار ہے،جتنی خرابیاں پچھلے دس پندرہ سال میں پیدا ہوئی ہیں ان کو ٹھیک کرنے میں وقت لگے گا لیکن ہم بھی اپنے فرض سے غافل نہیں ہیں، لوڈشیڈنگ 2010-11ءسے کئی کم ہورہی ہے۔انہوںنے کہاکہ پچھلی حکومتوںنے لوڈشیڈنگ ختم کرنے کے لئے کوئی اقدامات نہیںکئے،پہلی دفعہ سنجیدگی کے ساتھ ہم نے اس مسئلے پر کام شروع کیاہے،ہم چاہتے کہ بجلی کوئلے اور پانی سے حاصل کی جائے،اس سے بجلی کا بحران ختم ہوگا اور بجلی سستی بھی حاصل ہوگی، کوئلے سے دس پلانٹ گڈانی میں لگا رہے ہیں،پورٹ قاسم میں دو پلانٹس لگ رہے ہیں،چار پلانٹس پنجاب میں لگ رہے ہیں،تھر کے مقام پر دس پلانٹس لگیںگے، خیبر پختونخوا میں بھی بجلی پیدا کرنے کے منصوبے شروع کرینگے۔انہوںنے کہاکہ1999ءمیں ہماری حکومت ختم کردی گئی ،ہمیں ملک سے باہر جانا پڑا،پشاور سے لاہور تک موٹر وے بنائی،اس سے آگے کسی کو ہمت نہیں ہوئی کہ موٹر وے بناتے،ہم پھر لاہور سے کراچی تک موٹر وے بنارہے ہیں، اسلام آباد سے مظفرآباد تک ٹرین کا منصوبہ شروع کررکھی ہے،فزیبلٹی اگلے چھ مہینوںمیں تیار ہوجائے گی،کاشغر سے لیکر گوادر تک منصوبہ بھی شروع کرینگے، ہم ریلوے کو اپ گریڈ کررہے ہیں۔انہوںنے کہاکہ ایک سال ہماری حکومت کا مکمل ہوچکا ہے،ابھی چار سال باقی ہیں ہم نے جن منصوبوں کا اعلان کیا ہے ان پر عمل کرنے کی کوشش کررہے ہیں،اگر اللہ تعالی نے ہمیں موقع دیا تو ہم بہت کچھ اس ملک کے لئے کرینگے۔ انہوںنے کہاکہ چکوال شہیدوں اورغازیوں کی سرزمین ہے پاکستان جس پر فخر کرسکتاہے،ہم اس علاقے کے رہنے والوں کو سلام پیش کرتے ہیں کیونکہ چکوال کے سپوت پاکستان کے میں دہشت گردی کے خلاف جنگ لڑرہے ہیں۔ اللہ تعالی ہمیں اس جنگ میں کامیاب وکامران کریگا اور پاکستان میں امن قائم ہوگا،ہم چاہتے ہیں کہ پورے ملک میں امن قائم ہو،رات بارہ ،ایک یا دو بجے کوئی سفر کررہا ہو توان کی طرف میلی آنکھ سے دیکھنے والا کوئی نہیں ہوناچاہیے، ملک کوجرائم سے پاک کرنے کا ارادہ ہے ،قیام امن کے لئے میں کئی بار کراچی جاچکا ہوں اور ہم وہاں امن قائم کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔قبل ازیں وزیراعظم میاں نواز شریف چکوال پہنچے تو مسلم لیگ (ن) کی مقامی قیادت نے ان کا استقبال کیا، وزیر مملکت برائے مواصلات عبدالحکیم بلوچ،جنرل ریٹائرڈ عبدالقیوم وزیراعظم کے ہمراہ تھے، وزیراعظم میاں نواز شریف کو این ایل سی کے بریگیڈیئر اسلم کی طرف سے مندرہ چکوال اور سوہاوہ چکوال سڑکوں کے حوالے سے بریفنگ دی گئی،129 کلو میٹر طویل سڑکوں کی تعمیر پر 8 ارب 50 کروڑ روپے لاگت آئے گی،63 کلو میٹر طویل مندرہ چکوال روڈ سوا چار ارب روپے کی لاگت سے دو رویہ ہوگا۔66 کلو میٹر سوہاوہ چکوال روڈ پر 4 ارب34 کروڑ روپے کی لاگت آئے گی، دونوں شاہرائیں دو رویہ ہونگیں ،لاکھوں لوگوں کو سفری سہولیات میسرآئیںگی۔وزیراعظم میاں نواز شریف کو بریفنگ میں منصوبوں کی تکمیل کا وقت 18 ماہ بتایا گیا جبکہ وزیراعظم نے دونوں منصوبوں کو 1 سال میں مکمل کرنے کی ہدایت کی ہے۔وزیراعظم نے10 کلو میٹر شمالی بائی پاس کی منظوری دی ہے۔وزیراعظم میاں نوازشریف نے مندرہ چکوال اور سوہاوہ چکوال سڑکوں کو دو رویہ کرنے کا سنگ بنیاد رکھا۔سڑکوں کی دو رویہ کرنے کی سنگ بنیاد تقریب کا آغاز تلاوت قرآن پاک سے ہوا، تلاوت کی سعادت مولانا غلا م مرتضی نے حاصل کی،تقریب میں صوبائی وزیر برائے ہاﺅسنگ اینڈ کمیونیکیشن ملک تنویر اسلم سیٹھی ،ممبر قومی اسمبلی سردار ممتاز ٹمن،ممبر قومی اسمبلی راجہ جاوید اخلاص، ممبر قومی اسمبلی میجر ریٹائرڈ طاہراقبال، ممبر قومی اسمبلی بیگم عفت لیاقت ودیگر اہم شخصیات نے شرکت کی

مزید :

صفحہ اول -