سندھ پولیس میں 10ہزار اہلکار بھرتی کرنے،ٹریننگ فوج سے کرانے کا فیصلہ

سندھ پولیس میں 10ہزار اہلکار بھرتی کرنے،ٹریننگ فوج سے کرانے کا فیصلہ
سندھ پولیس میں 10ہزار اہلکار بھرتی کرنے،ٹریننگ فوج سے کرانے کا فیصلہ

  

 کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک)وزیر اعلیٰ سندھ قائم علی شاہ کی زیر صدارت امن وامان کے حوالے سے اہم اجلاس ہوا ہے جس میں سیکیورٹی کے حوالے سے اہم فیصلے کئے گئے ہیں۔اجلاس میں کراچی سمیت سندھ بھر میں امن وامان کی صورتحال کاجائزہ لیا گیا ،اجلاس میں گورنر سندھ اور کور کمانڈر نے خصوصی شرکت کی اورکراچی کے اہم مقامات اور تنصیبات کی سیکیورٹی مزید سخت کرنے کا فیصلہ کیا گیا ۔سپر ہائی وے پر اور اردگرد کے علاقوں میں قائم مدرسوں کی رپورٹ مرتب کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے اورسیکرٹری داخلہ کو سپر ہائی وے کے اطراف میں واقع مدرسوں کی رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کی گئی ہے اس کے ساتھ ہی ساتھ سندھ پولیس میں 10ہزار پولیس اہلکار بھرتی کرنے اور نئے بھرتی ہونے والے اہلکاروں کی ٹریننگ فوج سے کرانے کابھی فیصلہ کیا گیا ہے۔ اجلاس میں یہ فیصلہ بھی کیا گیا ہے کہ جہاں پولیس اہلکاروں کی ٹارگٹ کلنگ ہو گی وہاں کارروائی کی جائے گی ۔کراچی کے 10حساس علاقوں میں رینجرز اور پولیس کا مشترکہ آپریشن کیا جائے گا۔یوم علی پر سیکیورٹی کے لئے16ہزار اہلکار تعینات کئے جائیں گے۔ جلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ قائم علی شاہ نے کہا کہ شہر میں سیکیورٹی ہائی الرٹ رہے گی،شاپنگ سینٹر،عبادت گاہوں کی سیکیورٹی مزید سخت کی جا رہی ہے،رینجرز پولیس کسی بھی خطرے سے نمٹنے کے لئے تیار ہے جبکہ فوج بیک اپ کے طور پر موجود ہے۔

مزید :

کراچی -