68 سال بعد کیلاشیوں کی مذہبی شناخت کا تعین کرلیا گیا

68 سال بعد کیلاشیوں کی مذہبی شناخت کا تعین کرلیا گیا
68 سال بعد کیلاشیوں کی مذہبی شناخت کا تعین کرلیا گیا

  

اسلام آباد (ویب ڈیسک) قیام پاکستان کے 68 سال بعد بالآخر کیلاشیوں کی مذہبی شناخت کا تعین کرتے ہوئے انہیں باقاعدہ طور پر اقلیت قرار دے دیا گیا، قومی شناختی کارڈ میں کیلاشیوں کو اقلیتی خانہ میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ، یہ معمہ چیئرمین نادرا مبین یوسف نے حل کیا ہے ، جنہیں کیلاشیوں نے اپنا محسن قرار دیا ہے۔ مقامی اخبار روزنامہ دنیا کے مطابق کیلاش جسے کافرستان بھی کہا جاتا ہے ، وہاں پر رہائش پذیر قبیلہ کیلاش کے افراد کو نہ تو مسلمانوں میں شمار کیا جاتا ہے اور نہ ہی شناختی کارڈ میں اقلیتوں کے ساتھ منسلک کیا گیا۔ یہ ایک ایسا گمبھیر مسئلہ تھا کہ کیلاش جو انتہائی پسماندہ اور غریب علاقہ ہے وہاں سے اگر کوئی لڑکا یا لڑکی پڑھ لکھ جاتا تو ملازمت کے حصول کیلئے اسے اپنی شناخت کرانا مشکل ہو جاتی، کیونکہ کیلاشیوں کو نہ تو مسلمان اور نہ ہی اقلیت میں شمار کیا جاتا تھا۔ چترال سے اے پی ایم ایل کے رکن قومی اسمبلی شہزادہ افتخار نے گزشتہ دنوں چیئرمین نادرا مبین یوسف سے ملاقات کر کے مسئلہ بیان کیا تھا۔ ذرائع کے مطابق اب شناختی کارڈ فارم میں کیلاشیوں کیلئے الگ خانہ مختص کر دیا گیا ہے اور انہیں باقاعدہ طور پر اقلیت قرار دیا گیا ہے ، تاکہ وہ ملازمتوں کے حصول کیلئے اقلیتی کوٹہ پر درخواست دے سکیں۔

مزید :

اسلام آباد -