بحریہ ٹاؤن میں پاکستان کے پہلا ورلڈ کلاس سپائنل اور نیورو سرجری سنٹر کا قیام

بحریہ ٹاؤن میں پاکستان کے پہلا ورلڈ کلاس سپائنل اور نیورو سرجری سنٹر کا قیام

  

لندن(خصوصی رپورٹ) بحریہ ٹاؤن لندن نیورو سرچری پارٹنر شپ اور لندن نیورو سائنسز سینٹر لمیٹڈ نے 4 ماہ قبل ایک تاریخی معاہدے پر دستخط کئے تھے جس کی رو سے پاکستان اور اس خطے میں صحت کے شعبے میں انقلابی پیش رفت ہوگی۔ اس موقع پر لندن میں ایک تقریب منعقد کی گئی جس میں چیئرمین بحریہ ٹاؤن کے ساتھ دنیا کے مقبول ترین میڈیکل سنٹر ہارلے سٹریٹ کلینک لندن کے 19 نامور سرجنز نے شرکت کی۔ ان نامور سرجنز میں رحچر ڈگلن، عرفان ملک، کرس شینڈلر، نک ٹامس، ڈیوڈ بیل، سینن برازی، رابرٹ ویکس، ڈاکٹر این احمد، کے براکس، کرسٹو لیس، ڈاکٹر شجاع الدین، بہرام فاروقی، ثاقب بشیر، ڈاکٹر شفافی، عارف خان، اظہر خان، ڈاکٹر زبیر‘ ڈومینیکو والینٹی، ڈیوڈ لارنس اور پیٹر جانوس شامل تھے۔ اس انقلابی پارٹنر شپ نے بحریہ ٹاؤن کے ہسپتالوں، بحریہ انکلیو اسلام آباد اور بحریہ گالف سٹی اسلام آباد میں ورلڈ کلاس سپائنل سرجری، بحالی اور Nerv injury repair centers قائم کئے ہیں۔ پاکستان میں اپنی نوعیت کے یہ وہ پہلے سنٹرز ہوں گے جو APS پشاور کے زخمی طالب علم محمد ابراہیم جیسے مریضوں کو جو یورپی ملکوں کے مہنگے علاج تک رسائی نہیں رکھتے مکمل ٹریٹمنٹ اپنے ملک میں ہی فراہم کریں گے۔ بحریہ انکلیو اسلام آباد کے قائم کردہ سنٹر کیلئے اس سلسلے میں مشینری اور سامان خریدا جاچکا ہے جس کی تنصیب رواں سال اکتوبر تک برٹش سرجنز کی زیر نگرانی کی جائے گی۔ چند ماہ تک ہسپتالوں کیلئے ڈاکٹرز اور سرجنز کی بھرتی کا آغاز کیا جائے گا جن کو 6 ماہ کی برٹش ڈاکٹرز سے ٹریننگ دلوائی جائے گی۔ یہ ہسپتال اگلے سال کے آغاز سے مکمل آپریشنل ہوگا۔ یہ سنٹرز پاکستان میں پہلی بار پائینر سرجری، کی ہول سپائن سرجری، روبوٹک سپائن سرجری اور جدید ترین اسٹیٹ آف دی آرٹ سپائن سے متعلقہ سرجری فراہم کریں گے۔ امریکہ اور برطانیہ کے نامور ہسپتالوں کے فیکلٹی ڈاکٹرز ان ہسپتالوں کو چلائیں گے اور لوگوں کو اسی معیار کی سرجریز، ٹریٹمنٹ اور علاج فراہم کریں گے جو لوگ ہارلے سٹریٹ کلینک اور دیگر بے شمار برطانوی ہسپتالوں میں حاصل کرتے ہیں۔ یہ نیشنل سپائن ہسپتال تمام ملک کیلئے سپائن کے امراض کا سپیشلسٹ سنٹر ہوگا جو پیچیدہ سرجریز کرنے کی صلاحیتوں کا حامل ہوگا۔اس موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ملک ریاض حسین نے کہا کہ میرا خواب ہے کہ میں پاکستان میں ایک ایسا جدید ترین ہیلتھ کیئر سنٹر قائم کروں جہاں ہر قسم کی تکلیف اور بیماری کا جدید ترین علاج دستیاب ہو اور دنیا کی ہر جدید ترین میڈیکل اور سرجیکل ٹیکنالوجی اور میڈیکل کیئر میسر ہو۔ ایک ایسا ہسپتال ہو جہاں مریض کی ہر بیماری کا علاج ایک چھت کے نیچے میسر ہو۔ اس کے علاوہ علم اور ہنر کے تبادلے کے پروگرام کے تحت یہاں کی ٹیموں کو کنگز کالج لندن کی فیکلٹی میں فیلو شپ/انٹرن شپ بھی فراہم کی جائے گی۔ یہ تینوں ہسپتال دیگر علاقائی ہسپتالوں سے بھی رابطے کے تحت اسٹیٹ آف دی آرٹ کلینیکل فیسلیٹیز، ٹیچنگ، ٹریننگ اور ریسرچ فیسلیٹیز کا تبادلہ کریں گے۔بحریہ ٹاؤن نے حال ہی میں سعودی جرمن ہسپتال گروپ (بیت البیٹر جی میڈیکل کمپنی) کے ساتھ پاکستان بھر میں بحریہ ٹاؤن پراجیکٹس میں ہیلتھ کیئر سیکٹر میں 400 ملین ڈالر سے زائد کی غیر ملکی انویسٹمنٹ کا معاہدہ کیا ہے جو پاکستان کی ہیلتھ کیئر تاریخ کا سب سے بڑا بین الاقوامی سرمایہ کاری کا معاہدہ ہے۔ سعودی جرمن گروپ 300-150 بیڈ کے نئے ہسپتال تعمیر کرنے کے ساتھ ساتھ بحریہ ٹاؤن کراچی اور لاہور میں موجودہ ہسپتال بھی آپریٹ کرے گا۔

بحریہ ٹاؤن

مزید :

صفحہ آخر -