شہری مقصود قتل کیس،مقدمے  کے اہم گواہ کا بیان قلمبند کرلیا گیا 

شہری مقصود قتل کیس،مقدمے  کے اہم گواہ کا بیان قلمبند کرلیا گیا 

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر)انسداد دہشتگردی کی خصوصی عدالت نے شہری مقصود قتل کیس میں رکشے میں سوار مقدمے کے اہم گواہ کا بیان قلمبند کرتے ہوئے مزید گواہوں کو طلب کرلیا۔ کراچی سینٹرل جیل میں انسداد دہشتگردی کمپلیکس میں خصوصی عدالت کے روبرو شہری مقصود قتل کیس کی سماعت ہوئی۔ مقدمے میں اہم پیش رفت سامنے آگئی۔ عدالت نے رکشہ میں سوار مسافر اور کیس کے اہم گواہ رانا غلام مرتضی کا بیان قلمبند کرلیا۔ بیان دیتے ہوئے غلام مرتضی نے کہا کہ میں اسی رکشہ میں سوار تھا جو مقتول  چلا رہا تھا۔  اس کا دوست مقصود اس کے ساتھ بیٹھا تھا۔ شارع فیصل پر موٹر سائیکل پر سوار 2 افراد نے روکنے کی کوشش کی۔ رکشہ ڈرائیور رف نے رکشہ نہیں روکا، پھر اچانک فائر کی آواز آئی۔رکشہ پلٹ گیا اور اس کے بعد شدید فائرنگ ہوئی۔ کچھ دیر بعد میں نے شور مچایا کہ میں مسافر ہوں تو مجھے پولیس والے بے باہر نکالا۔ مجھے جس پولیس والے نے باہر نکالا اس کا قد لمبا اور داڑھی تھی۔ مجھے تھانے لیجاکر تصدیق کے بعد چھوڑا دیا گیا۔ عدالت نے گواہ کا بیان قلمبند کرنے کے بعد مزید گواہوں کو طلب کرلیا۔ عدالت نے سماعت 29 جولائی تک ملتوی کردی۔ پولیس کے مطابق مقدمے میں 4 پولیس اہلکار ملزمان نامزد ہیں۔ ملزمان اے ایس آئی طارق خان، اکبر خان، عبد الوحید اور شوکت ضمانت پر رہا ہیں۔ 18 فروری کو شاہراہ فیصل پر رکشہ ڈرائیور رف کا دوست مقصود جاں بحق ہوگیا تھا۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -