باسمتی ایسوسی ایشن کے زیر اہتمام ” خوشحال کسان سیمینار“ کا انعقاد 

باسمتی ایسوسی ایشن کے زیر اہتمام ” خوشحال کسان سیمینار“ کا انعقاد 

  

لاہور(نیوز رپورٹر) پاکستان باسمتی ہیریٹج ایسوسی ایشن PBHA)) کے زیرِاہتمام محکمہ زراعت حکومتِ پنجاب کے تعاون سے مقامی ہوٹل گوجرانوالہ میں ”  خوشحال کسان سیمینار“ کا انعقاد کیا گیا۔ جس کابنیادی مقصد باسمتی چاول کا تحفظ اور اسکی کاشت کے فروغ،تصدیق شدہ بیج کا استعمال اور زمینی تجزیے کے بعد کھادوں کا متناسب استعمال اور بین الاقوامی طور پر منظور شدہ زہروں کے ذمہ دارانہ استعمال کو یقینی بناناہے۔ مناسب وقت پر دھان کی جدید مشینوں سے کٹائی اور جدید تحقیق سے کسانوں کو روشناس کروانا پروگرام کے اہم مقاصد میں شامل تھا۔پاکستان باسمتی ہیریٹج ایسوسی ایشن کی طرف سے شیخ عدنان، ڈاکٹر جنید ارشد، ڈاکٹر محمد اطہر،چوہدری ذوالفقار،اور راجہ ارسلان سمیت اہم ارکان نے شرکت کی۔ سمینار میں سٹیج سیکریڑی کے فرائض عمران شیخ کوآرڈینیڑپاکستان باسمتی رائس ہیریٹج ایسوسی ایشنPBHA)) نے ادا کرتے ہوئے کسانوں کوبتایا کہ باسمتی چاول کی SRP سٹینڈرڈکے تحت کاشت سے چھوٹے کسان بھی کم پیداواری لاگت سے زیادہ پیداوار حاصل کر کے بھر پور منافع کما سکتے ہیں اور ملک کو خطیر زرِمبادلہ کمانے کے قابل بنا سکتے ہیں۔

 سمینار سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان باسمتی ہیریٹج ایسوسی ایشن(PBHA) کے کنویئنر شاہد حسین تاڑر نے باسمتی رائس ہیریٹج ایسوسی ایشن کی طرف سے تمام شرکاء کو خوش آمدیدکہا،PBHAکے و یثرن اورقیام کے بنیادی مقاصد پر تفصیلاََ روشنی ڈالی۔انھوں نے بتایا کہ باسمتی چاول ہمارے ملک کا قیمتی ورثہ ہے اس کے تحفظ اور بقا ء کے لیے مشترکہ کوششوں کو فروغ دیناوقت کی اہم ضرورت ہے جس کے حصول کے لئے آج PBHAنے تمام متعلقہ اداروں کودعوت دی ہے تاکہ مل بیٹھ کر مشترکہ لائحہ عمل طے کیا جائے۔ عامر مانگٹ ڈپٹی ڈائریکٹر آن فارم واٹرمینجمنٹ محکمہ زراعت پنجاب نے کسانوں کو ملک میں پانی کی شدید قلت کے بارے میں معلومات فراہم کیں نیزلیزر لیولنگ اور AWDٹیوب کے استعمال سے پانی کی بچت کو فروغ دینے پر زور دیا۔ڈاکٹر عابد محمودڈائریکٹر جنرل ر یسرچ  محکمہ زراعت نے کسانوں کو بتایا کہ معیاری اورتصدیق شدہ بیج کے استعمال سے نہ صرف پیداوار میں اضافہ کیا جا سکتا ہے بلکہ باسمتی چاول کی کوالٹی میں بھی بہتری لائی جاسکتی ہے۔

جس سے چاول کی برآمد کو دُگنا کیاجا سکتاہے۔ ڈاکٹر انجم علی بٹر ڈائریکٹر جنرل محکمہ زراعت توسیع نے کسانوں کو کھادوں پر دی جانے والی حکومتی سبسڈی کے بارے میں آگاہی مہیا کی اور انھوں نے بتایا کہ کس طرح کھادوں کے مؤثر اور متوازن استعمال کے ذریعے فی ایکڑ پیداوار بڑھائی جا سکتی ہے۔ اس کے علاوہ پوٹاش زنک اور بوران کے استعمال سے پیداوار اور کوالٹی میں اضافہ کیا جا سکتا ہے۔ڈاکٹر عارف ندیم چیف ایگزیکٹو آفیسر پاکستان ایگریکلچر کولیشن (PAC)نے کسانوں کو بتایا کہ مشینی کاشت کے ذریعے نہ صرف لیبر اور پانی کی بچت ممکن ہے بلکہ پودوں کی پوری تعدادکے ذریعے فی ایکڑ پیداوار میں بھر پور اضافہ بھی کیا جا سکتا ہے انھوں نے مزید بتایا کہ ہمارے ملک میں سروس پروائیڈر ماڈل ہی کامیاب ہے۔ نوید انور بھنڈر چیئرمین پاکستان ایگریکلچر مارکیٹنگ اتھارتی (PAMRA)نے کسانوں کو بتایا کہ PAMRAکے قیام کا مقصدنہ صرف کسانوں کو انکی فصل کی بہتر قیمت کے حصول کو یقینی بنانا ہے بلکہ کمیشن ایجنٹس کے چُنگل سے بھی نجات دلانا ہے۔شاہین رضا چیمہMPAگوجرانوالہ نے زمین کی صحت اور دیرپا استعمال پر زور دیا اور انھوں نے گوجرانوالہ میں زرعی چیمبر بنانے کی تجویز دی۔ملک نعمان احمد لنگڑیال صوبائی وزیرِزراعت  جو تقریب کے مہمانِ خصوصی تھے انھوں نے حکومت کی زرعی پالیسی اور اسکے تحت جاری منصوبوں کے بارے میں کسانوں کو آگاہ کیا  انھوں نے بتایا کہ چاول کی انڈسٹری اور کسانوں کے تعاون سے چاول کی ایکسپورٹ کودُگنا کیا جائے گا۔ڈاکٹر محمد افضل کنٹری ڈائریکٹر کراپ لائف پاکستان نے کسانوں کو زہروں کے ذمہ دارانہ استعمال اور وقفہ برداشت کی پابندی کے بارے میں تفصیلاََ روشنی ڈالی انھوں نے بتایا کہ سپرے کے دوران حفاظتی تدابیر اختیار کرنا سپرے مین کی صحت اور اردگرد کے ماحول کے تحفظ کے لیے نہایت ضروری ہیں پروفیسر ڈاکٹر اشفاق احمد چٹھہ سربراہ شعبہ ماحولیاتی تبدیلی زرعی یونیورسٹی فیصل آباد نے کسانوں کو ماحولیاتی تبدیلی کے مطابق مونجی کی بہتر اور دیرپا پیداوار حاصل کرنے کے لیے جدید طریقے اپنانے پر زور دیاانھوں نے بدلتے موسم کے مطابق وقتِ کاشت اور برداشت کو ایڈجسٹ کرنے کے لیے مفید راہنمائی مہیا کی۔احسان چیمہ ایگرانومی لیڈ کارٹیوا پاکستان نے کسانوں کو بتایا کہ چاول اور مکئی کی کاشت سے نہ صرف گندم سے بہتر پیداوار حاصل ہوگی بلکہ مکئی کی مانگ میں اضافہ کی وجہ سے کسانوں کی آمدن میں خاطرخواہ اضافہ ہو گا۔اس موقع پر ملکی اور غیر ملکی کمپنیوں اور سرکاری اداروں مثلاََ RRIکالاشاہ کاکو،محکمہ زراعت توسیع،کراپ لائف،سجینٹا،کارٹیوا،اینگرو فرٹیلائزر، FFC،فاطمہ فرٹیلائزر،UPL(سابقہ اریسٹا لائف سائنسز)،گرین لینڈ،کینزو اے-جی، بہاول انجینئرنگ نے کسانوں کی راہنمائی کے لیے اپنے سٹالز بھی لگائے جو کہ کسانوں کی بھر پور توجہ کا مرکز بنے۔سیمینار میں میاں صادق حسین تاڑر،چیئرمین گلیکسی رائس ملز گوجرانوالہ،نعیم فرخ زونل مینجر اینگرو فرٹیلائزر،راؤ محمد طارق سینئر مینجر FFC،انجینئر مشتاق احمد گل چیئرمین SACAN،چوہدری اشرف EX DGآن فارم واٹر مینجمنٹ نے بھی خصوصی طور پر شرکت کی اور PBHAکی کوششوں کو سراہا۔

مزید :

کامرس -