کرپشن کے خلاف حکومت کے اقدامات لائق تحسین ہیں: میاں زاہد حسین

کرپشن کے خلاف حکومت کے اقدامات لائق تحسین ہیں: میاں زاہد حسین

  

کراچی(یواین پی)پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فور م وآل کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدر،بزنس مین پینل کے سینئر وائس چیئر مین اور سابق صوبائی وزیر میاں زاہد حسین نے کہا ہے کہ کرپشن سے معاشرے کا ہر شعبہ بری طرح متاثر رہاہے اس لئے حکومت نے اسکے خاتمے کو ہدف بنایا ہوا ہے جو قابل قدر ہے۔ملک کو سب سے زیادہ نقصان سیاستدانوں اور حکام کی کرپشن سے ہوتا ہے جس کی وجہ سے غربت اور بے چینی میں اضافہ ہوتا ہے جبکہ معیشت آئی ایم ایف، ورلڈ بینک، ایشیائی ترقیاتی بینک اور دیگر بین الاقوامی اداروں کی محتاج ہو جاتی ہے۔میاں زاہد حسین نے بز نس کمیونٹی سے گفتگو میں کہا کہ حکومت کرپشن میں ملوث اشرافیہ کے خلاف اقدامات کر رہی ہے مگر سرکاری اداروں میں بھی کرپشن کے خلاف تسلی بخش اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔اس سلسلہ میں صوابدیدی اختیار کو کم کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ جہاں جتنی صوابدید ہو گی وہاں کرپشن کے امکانات بھی اتنے ہی زیادہ ہو نگے،جس سے نہ صرف عوام کی پریشانی بڑھتی ہے بلکہ ملکی و غیر ملکی سرمایہ کاری کی بھی حوصلہ شکنی ہوتی ہے۔میاں زاہد حسین نے کہا کہ ٹریڈرز کی ملک گیر ہڑتا ل بھی اسی سلسلے کی کڑی ہے لہذا ٹیکس نادہندگان کو ٹیکس کی ادائیگی پر آمادہ کرنے اور بدعنوان عناصر کی حوصلہ شکنی کے لئے خوف کی فضا قائم کرنا مسائل کا حل نہیں بلکہ اسکے لئے این او سی، پرمٹ، اپرول اور مختلف غیر ضروری سرٹیفیکیٹس جمع کروانے کے نظام میں بنیادی تبدیلی لانا ہو گی۔

کیونکہ ان کاغذات کے حصول سے حکومت کو اتنا فائدہ نہیں ہوتا جتنا مختلف محکموں کے اہلکاروں کو ہوتا ہے۔اس وقت پاکستان کاروبار میں سہولت کی درجہ بندی میں 156ویں نمبر پر ہے۔موجودہ وقت میں کسی کو کارخانہ بنانا ہو، پلازہ یا گھر تعمیر کرنا ہو، درآمد، برآمدیا کوئی بھی کاروبار کرنا ہو تو اسے کاغذات کے نہ ختم ہونے والے سلسلہ کا سامنا کرناپڑتا ہے جبکہ درجنوں محکمے اور انواع و اقسام کے ٹیکس بھی اسے خوفزدہ کرنے کے لئے کافی ہوتے ہیں جسکی وجہ سے ٹریڈرزرجسٹرڈ ہونے سے کتراتے ہیں۔انھوں نے کہا کہ صورتحال میں مثبت تبدیلی کے لئے بیوروکریسی کے اثرو رسوخ اور صوابدیدی اختیارات میں کمی کے لئے ٹیکنالوجی کا استعمال بڑھانا سب سے سہل راستہ ہے جس سے کاروباری لاگت کم ہو جائے گی جو ٹریڈرز اورعام سرمایہ کاروں کو کا روباری سرگرمیوں میں اضافہ کیلئے راغب کرنے کا ذریعہ بنے گی اور معیشت کی نشوونما میں اضا فہ ممکن ہوگا۔

مزید :

کامرس -