ٹنگدار قصبے میں بھارتی فورسز نے دو شہریوں کو گولی مار کر شہید کر دیا

ٹنگدار قصبے میں بھارتی فورسز نے دو شہریوں کو گولی مار کر شہید کر دیا

سری نگر(کے پی آئی) جنوبی کشمیر کے کپوارہ ضلع میں لائن آف کنٹرول کے ٹنگدار سیکٹر میں بھارتی فورسز نے دو شہریوں کو گولی مار کر شہید کر دیا ہے ۔ بھارتی فوجی ترجمان نے دعوی کیا ہے کہ جمعرات کو کچھ عسکریت پسندوں نے ٹنگدار قصبے میں دراندازی کی بھارتی فورسز اور عسکریت پسندوں میں جھڑپ ہوئی ۔جھڑپ میں دو عسکریت پسند مارے گئے کے پی آئی کے مطابق ادھر مژھل سیکٹر کپوارہ میں حد متارکہ کے نزدیک جاری تصادم آرائی میں فوج کا ایک میجر بھی زخمی ہو گیا ہے ۔فورسز کی اضافی کمک طلب کرکے مزید علاقوں کو گھیرے میں لے لیا گیا ہے فوج کی ٹکڑیاں انتہائی گھنے جنگلات کے اندر تلاشی مہم شروع کیے ہوے ہے شوپیاں میں یکے بعد دیگرے دو گرنیڈ دھماکے تین عام شہری مضروب ، پولیس وفورسز کی مشترکہ پارٹی نے وسیع علاقے کو محاصرے میں لے کر تلاشی کارروائی شروع کی ۔۔ دریں اثنا گھپ بل کیموہ کولگام میں عسکریت پسندوں نے ایس او جی کیمپ پر اندھا دھند فائرنگ کی ،زخمی یا ہلاکت کے بارے میں کوئی اطلاع موصول نہیں ہوئی۔ پہاڑی ضلع شوپیاں میں اس وقت سنسنی اور خوف و دہشت کا ماحول پھیل گیا جب عسکریت پسندوں نے پولیس اسٹیشن پر گرنیڈ داغا جو زور دار دھماکہ کے ساتھ پھٹ گیا جس کے نتیجے میں پولیس اسٹیشن کی عمارت کو جزوی نقصان پہنچا۔ ابھی پولیس اسٹیشن پر گرنیڈ حملے کی گونج سنائی دے رہی تھی کہ عسکریت پسندوں نے بٹہ پورہ مین چوک میں ایک اور گرنیڈ داغا جس کے نتیجے میں دو دکانداروں سمیت 3افراد زخمی ہوئے جنہیں فوری طورپر سب ڈسٹرکٹ اسپتال منتقل کیا گیا ۔ یکے بعد دیگرے دو گرنیڈ حملوں کے بعد پولیس وفورسز کے اعلی آفیسران جائے موقع پر پہنچ گئے اور وسیع علاقے کو محاصرے میں لے کر گھر گھر تلاشی کارروائی شروع کی جو آخری اطلاعات موصول ہونے تک جاری تھی ۔

ایس ایس پی شوپیاں شلندر مشرا نے تفصیلات فراہم کرتے ہوئے کہاکہ دو منٹوں کے اندر اند رعسکریت پسندوں نے پولیس اسٹیشن شوپیاں اور مین چوک بٹہ پورہ میں دو گرنیڈ داغے جس کے نتیجے میں تین عام شہری زخمی ہوئے ۔ ایس ایس پی کے مطابق حملہ آوروں کو تلاش کرنے کیلئے کئی گاؤں کو محاصرے میں لیا گیا ہے ۔۔ دریں اثنا 15جون رات دس بجے کے قریب گھپ بل کیموہ کولگام میں اس وقت سنسنی اور خوف ودہشت کا ماحول پھیل گیا جب عسکریت پسندوں نے ایس او جی کیمپ پر اندھا دھند فائرنگ کی ، جموں وکشمیر پولیس کے اہلکاروں نے بھی جوابی کارروائی کی اس دوران کئی منٹوں تک گولیوں کا تبادلہ ہوا ۔ معلوم ہوا ہے کہ کیمپ پر فائرنگ کے بعد پولیس وفورسز کی بھاری جمعیت نے گھپ بل کیموہ کولگام اوراس کے ملحقہ علاقوں کو محاصرے میں لے کر گھر گھر تلاشی کارروائی شروع کی ۔ مقامی لوگوں نے الزام لگایا کہ تلاشی کارروائی کے دوران فورسز اہلکاروں نے گھریلو اشیاء کو تہس نہس کرنے کے ساتھ ساتھ کئی افراد کی ہڈی پسلی ایک کردی ۔ پولیس ذرائع کے مطابق فرار ہوئے جنگجوؤں کو تلاش کرنے کیلئے کئی علاقوں میں تلاشی کارروائی شروع کردی گئی ہے تاہم گرفتاریوں کے بارے میں کوئی اطلاع موصول نہیں ہوئی ۔ کے پی آئی کے مطابق ادھرمژھل سیکٹر کپوارہ میں حد متارکہ کے نزدیک جاری تصادم آرائی میں فوج کا ایک میجر بھی زخمی ہوا ۔فورسز کی اضافی کمک طلب کرکے مزید علاقوں کو گھیرے میں لیکر تلاشی کارروائی جاری ہے اور جنگجوؤں کو ڈھونڈ نکالنے کیلئے فوج کی ٹکڑیاں انتہائی گھنے جنگلات کے اندر داخل ہوئیں۔ جدید ہتھیاروں سے لیس مزید عسکریت پسندوں نے گھنے جنگلات میں پناہ لے رکھی ہے جس کے پیش نظرتلاشی کارروائی کو وسعت دیتے ہوئے مزید علاقوں کو بھی گھیرے میں لیا گیا ہے، آخری اطلاع ملنے تک سینکڑوں کی تعداد میں پولیس اور فوج کے اہلکار گھنے جنگلات کو کھنگال رہے تھے جبکہ عسکریت پسندوں کو ڈھونڈ نکالنے کیلئے فوجی کے کھوجی کتوں کو بھی استعمال میں لایا جارہا تھا اور فوج کے خصوصی تربیت یافتہ پیرا کمانڈوز بھی کارروائی میں حصہ لے رہے ہیں۔شام دیر گئے تک فورسز اہلکارعسکریت پسندوں کا ٹھوس سراغ لگانے میں کامیاب نہیں ہوئے تھے ۔ خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے کہ فورسز اہلکاروں کو چکمہ دینے کیلئے عسکریت پسند مختلف اطراف میں پھیل گئے ہیں ۔دوسری جانب کنٹرول لائن کی نگرانی پر مامور اہلکاروں کو بھی دن رات چوکنا رہنے کی ہدایت دی گئی ہے۔اس ضمن میں خاص طور پر ایسے علاقوں میں گشت کا عمل تیز کردیا گیا ہے جہاں جنگجوؤں کی دراندازی کے زیادہ امکانات ہیں۔

مزید : عالمی منظر