ڈاکٹر عاصم سے زبردستی بیانات لیے جارہے ہیں ،انور منصور

ڈاکٹر عاصم سے زبردستی بیانات لیے جارہے ہیں ،انور منصور

کراچی (اسٹاف رپورٹر)ڈاکٹر عاصم حسین کے وکیل بیرسٹر انور منصورخان نے کہا ہے کہ ڈاکٹر عاصم حسین سے زبردستی بیانات لیے جارہے ہیں ،انکے موکل کی جاری کی گئی حالیہ وڈیو کا مقصد ججز پر دباؤ ڈالنا بھی ہوسکتا ہے جبکہ مجسٹریٹ کی غیر موجودگی میں بیانات کی کوئی حیثیت نہیں ہے۔جمعرات کو اپنی رہائش گاہ پر پریس کانفرنس کرتے ہوئے بیرسٹرانورمنصورنے کہاکہ ویڈیو اس زمانے کی لگتی ہے جس وقت ڈاکٹر عاصم رینجرز کی حراست میں تھے، جبکہ اس طرح کا کھیل پہلے بھی کھیلا گیا، جو چیز ویڈیو میں دکھائی گئی وہ جھوٹ پر مبنی ہے۔انہوں نے کہاکہ 18 جون کو ضمانت کی سماعت سے قبل ویڈیو منظر عام پر آئی ہے، جس کا مقصد درخواست ضمانت کے فیصلے پر اثر انداز ہونا اور ججز پر دباؤ ڈالنا بھی ہوسکتا ہے، جبکہ اس معاملے پر بحث بھی توہین عدالت کے زمرے میں آتی ہے۔ انہوں نے کہاکہ ڈاکٹرعاصم حسین سے بات ہوئی تو انہوں نے بتایا کہ انھیں نہیں یاد کہ انہوں نے ایسا کوئی بیان بھی دیاہے۔بیرسٹر انور منصور خان نے کہا کہ خوف ،حراست یا قید میں دیئے گئے بیان کی کوئی قانونی حیثیت نہیں ہوتی ۔ڈاکٹرعاصم نے انہیں بہت پہلے بتایا تھا کہ ان سے زبردستی بیانات لیے جارہے ہیں ۔انور منصور نے کہا کہ ڈاکٹرعاصم کو وڈیو میں ایسے دکھا یا گیا ہے جیسے وہ کسی کے خلاف ثبوت دے رہے ہوں ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر