فردوس مارکیٹ انڈرپاس کیخلاف دائر درخواست میں ترمیم کی اجازت

  فردوس مارکیٹ انڈرپاس کیخلاف دائر درخواست میں ترمیم کی اجازت

  

ش لاہور(نامہ نگارخصوصی)چیف جسٹس لاہورہائی کورٹ مسٹر جسٹس محمد قاسم خان نے فردوس مارکیٹ انڈرپاس کے خلاف گیٹ وے ٹیکنالوجیزکی طرف سے دائر درخواست میں ترمیم کی اجازت دیتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ عدالت کے سامنے یہ سوال ہی نہیں اٹھایاگیا کہ زمین غلط ایکوائر کی گئی ہے اور نہ ہی درخواست گزار نے اس سلسلے میں کوئی استدعا کی ہے،لگتاہے کہ درخواست گزار آئین کے آرٹیکل 140(اے) کی آڑ لے کر کوئی ذاتی عناد نکال رہا ہے، درخواست کی ابتدائی سماعت کے موقع پر چیف جسٹس کے ان ریمارکس پر درخواست گزار کے وکیل نے استدعا کی کہ انہیں درخواست میں ترمیم کی اجازت دی جائے،چیف جسٹس نے یہ اجازت دیتے ہوئے سماعت ملتوی کردی،دریں اثناء فردوس مارکیٹ انڈر پاس کے خلاف دائر ایک دوسری درخواست پر مسٹر جسٹس شکیل الرحمن خان نے پنجاب حکومت سے 21مئی تک جواب طلب کرلیاہے،جسٹس شکیل الرحمٰن خان نے چودھری نبیل جاوید ایڈووکیٹ کی درخواست پر سماعت کی۔درخواست گزار نے موقف اختیار کیا کہ فردوس مارکیٹ انڈر پاس کی تعمیر کے لئے ایکوائر کی جگہ کے معاملہ پر متاثرین کے اعتراضات کو نہیں سنا گیااوراراضی کو زبردستی ایکوائر کرلیا،اراضی کی قیمت بھی پنجاب حکومت نے ادا نہیں کی درخواست گزار نے استدعا کی کہ عدالت فردوس مارکیٹ انڈر پاس کی تعمیر روکنے کا حکم جاری کرے،گیٹ وے ٹیکنالوجیز کی درخواست میں موقف اختیار کیا گیاہے کہ ایل ڈی اے نے بلیک لسٹ کمپنی مقبول کالسن کو فردوس مارکیٹ انڈر پاس تعمیر کرنے کی اجازت دی۔

انڈر پاس

مزید :

صفحہ آخر -