کراچی، مبینہ مضر صحت کھانا کھانے سے 3کمسن بہن بھائی جاں بحق 

کراچی، مبینہ مضر صحت کھانا کھانے سے 3کمسن بہن بھائی جاں بحق 

  

کراچی(این این آئی)کراچی کے علاقے کھارادر میں مبینہ طور پر مضرصحت کھانا کھانے سے 3 کمسن بہن بھائی جان بحق ہوگئے۔ورثا نے بغیر کسی قانونی کارروائی کے نمازجنازہ ادا کرکے میوہ شاہ قبرستان میں تدفین کردی۔ ایڈیشنل آئی جی نے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے ڈی آئی جی ساؤتھ سے رپورٹ طلب کرلی۔ کھارادر کی فیملی نے برنس روڈ سے خریدے گئے برگر کھائے جس سے گھرمیں 3 بچوں کی طبیعت بگڑگئی انہیں فوری جنرل ہسپتا ل منتقل کیا جہاں تینوں دم توڑ گئے ایڈیشنل آئی جی پولیس کے مطابق جاں بحق ہونے والے تینوں بچے سگے بہن بھائی ہیں، بچوں میں 11سالہ عائزہ،8سالہ سعد اور2سالہ صفا شامل ہیں۔بچوں کے لواحقین نے پولیس کو ابتدائی بیان دیا ہے کہ برنس روڈ سے بچوں کو گزشتہ رات برگر کھلایا تھا، اس کے علاوہ گھر پر بھی کھانا پکایا گیا تھا۔پولیس کے مطابق بچوں کی موت کے حوالے سے لواحقین کا تفصیلی بیان ہونا باقی ہے، گھر میں کیڑے مار دوا کا اسپرے ہونے کی بھی اطلاعات ملی ہیں۔بچوں  کے دادا نے پولیس کو ابتدائی بیان قلمبند کرا دیا جس میں بتایا گیا ہے کہ بچوں کے والد کسی کام کے سلسلے میں  کوئٹہ گئے ہوئے تھے اور واقعے کی اطلاع ملنے پر خصوصی پرواز سے کراچی لوٹے تھے۔ایڈیشنل آئی جی غلام نبی میمن نے واقعہ کا نوٹس لے لیا ہے اور ڈی آئی جی ساتھ سے رپورٹ طلب کرلی ہے۔ ایڈیشنل آئی جی کراچی نے کہا ہے کہ واقعہ میں جاں بحق بچوں کا پوسٹ مارٹم ہونا چاہیے تھا تاہم بچوں کے لواحقین نے پوسٹ مارٹم کروانے سے منع کیا ہے۔متاثرہ فیملی کی جانب سے قانونی کارروائی سے انکار کے بعد پولیس نے اندراج مقدمہ کیلئے مدعی کوتلاش کرنا شروع کردیا ہے۔ایس پی سٹی کے مطابق  اصولی طور پر ضلعی انتظامیہ یا سندھ فوڈ اتھارٹی کی مدعیت میں مقدمہ درج ہونا چاہیے۔ 

3 بچے جاں بحق 

مزید :

صفحہ اول -