”لگ رہاہے اوگراچیئرپرسن بڑی چہیتی ہیں“لاہورہائیکورٹ چیئرپرسن اوگرا کی عدم پیشی پربرہم ،آئندہ سماعت پر وزیراعظم کے پرنسپل سیکرٹری طلب

”لگ رہاہے اوگراچیئرپرسن بڑی چہیتی ہیں“لاہورہائیکورٹ چیئرپرسن اوگرا کی عدم ...
”لگ رہاہے اوگراچیئرپرسن بڑی چہیتی ہیں“لاہورہائیکورٹ چیئرپرسن اوگرا کی عدم پیشی پربرہم ،آئندہ سماعت پر وزیراعظم کے پرنسپل سیکرٹری طلب

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)لاہورہائیکورٹ پٹرولیم مصنوعات کی قلت کیخلاف درخواست پر چیئرپرسن اوگرا کی عدم پیشی پرعدالت برہم ہو گئی اورحاضری معافی کی درخواست مسترد کردی۔چیف جسٹس قاسم خان نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ ذمہ داروں کوگرفتارکرکے جیل میں ڈالیں گے،لگ رہاہے اوگراچیئرپرسن بڑی چہیتی ہیں،چیئرپرسن اوگراکیخلاف کارروائی نہیں ہوئی توضرورکسی کی قریبی ہیں۔

نجی ٹی وی دنیا نیوز کے مطابق لاہورہائیکورٹ میں پٹرولیم مصنوعات کی قلت کیخلاف درخواست پرسماعت ہوئی،چیئرپرسن اوگرا کی عدم پیشی پرعدالت برہم ہو گئی۔چیف جسٹس لاہورہائیکورٹ نے استفسار کیا کہ سب سے پہلے پٹرول کا بحران کہاں پیداہوا؟،سیکرٹری پٹرولیم نے کہاکہ پٹرول کابحران میانوالی اوردیگراضلاع میں پیداہوا،چیف جسٹس قاسم خان نے کہاکہ میانوالی وزیراعظم کا حلقہ ہے،عدالت نے کہاکہ وزارت پٹرولیم نے صرف اسی حلقہ میں زیادہ توجہ دی،وزیراعظم نے اپنے حلقے کی وجہ سے پٹرول بحران ختم کرنے کاکہا،چیف جسٹس قاسم خان نے کہاکہ یہ خراب گورننس کی اعلیٰ مثال ہے۔

عدالت نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ ملک کوچیئرپرسن اوگراتباہ کررہی ہے،چیئرپرسن اوگراکی حاضری معافی کی درخواست مستردکرتے ہیں،چیف جسٹس ہائیکورٹ نے کہاکہ چیئرپرسن اوگراکام نہیں کرسکتی تواستعفیٰ دےدے،اوگرا والوں نے ملک کا بیڑہ غرق کردیا۔

عدالت نے کہاکہ معلوم ہے ملی بھگت سے کسی کیخلاف کارروائی نہیں ہوئی،ایگزیکٹواپنی ڈیوٹی میں ناکام ہوجائے توسوسائٹی تباہ ہوجاتی ہے، پٹرول کی قلت پیداکرنیوالوں کیخلاف فوجداری مقدمات درج کرائیں گے۔

چیف جسٹس ہائیکورٹ نے کہاکہ ذمہ داروں کوگرفتارکرکے جیل میں ڈالیں گے،لگ رہاہے اوگراچیئرپرسن بڑی چہیتی ہیں،چیئرپرسن اوگراکیخلاف کارروائی نہیں ہوئی توضرورکسی کی قریبی ہیں۔

چیف جسٹس قاسم خان نے کہاکہ ہم پارلیمنٹ کے معاملے میں مداخلت نہیں کررہے، آئندہ سماعت پروزیراعظم کے پرنسپل سیکرٹری طلب کرلیا گیا،عدالت نے کہاکہ وزیراعظم کے پرنسپل سیکرٹری کے جواب سے مطمئن نہیں۔

چیف جسٹس ہائیکورٹ نے کہاکہ اس معاملے پرجوڈیشل کمیشن بناسکتے ہیں،جوڈیشل کمیشن رپورٹ کی روشنی میں کارروائی ہوگی۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -علاقائی -پنجاب -لاہور -