بی این پی مینگل نے دراصل حکومت کا ساتھ کیوں چھوڑا ؟ سینئر صحافی سلیم صافی نے اندر کی بات بتا دی

بی این پی مینگل نے دراصل حکومت کا ساتھ کیوں چھوڑا ؟ سینئر صحافی سلیم صافی نے ...
بی این پی مینگل نے دراصل حکومت کا ساتھ کیوں چھوڑا ؟ سینئر صحافی سلیم صافی نے اندر کی بات بتا دی

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن )بی این پی مینگل نے حکومت کے ساتھ اتحاد ختم کرنے کا اعلان کر دیا ہے جس پر سینئر صحافی سلیم صافی نے تجزیہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت اور مینگل پارٹی کے درمیان جو بانڈ تھا جن کے ذریعے باتیں ہوتی تھیں وہ جہانگیر ترین تھے ، جہانگیر ترین جب درمیان سے ہٹ گئے تو ان کو تسلی دینے کیلئے بھی پی ٹی آئی میں کوئی نہیں تھا جس کے باعث انہوں ے مجبو ر ہو کر حکومت سے اتحاد ختم کرنے کا فیصلہ کیا ۔

نجی ٹی و ی جیونیوز کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے سینئر صحافی سلیم صافی نے کہا ہے کہ بی این پی مینگل کا حکومت کے ساتھ جو معاہدہ ہوا اور جو مطالبات رکھے گئے یہ بات درست ہے کہ ان میں سے کسی پر بھی عمل نہیں ہوا، گمشدہ افراد ، سی پیک کے حوالے سے تحفظات اور ترقیاتی جٹ کے حوالے سے تحفظات کو دور نہیں کیا جا سکا ۔

انہوں نے کہا کہ حالیہ بجٹ میں کے پی کے کی طرح بلوچستان کے حصے کو بھی مزید کم کر دیا گیاہے ، شروع دن سے مسئلہ یہ تھا کہ یہاں پر تو اتحاد ہو گیا اور انہوں نے حکومت کو سپورٹ کیا لیکن بلوچستان میں اصل اپوزیشن کا کردار ان کی ہی پارٹی ادا کر رہی ہے ،کاش ثناءاللہ بلوچ جیسے بندے قومی اسمبلی میں ہوتے تو وہ حقیقی اپوزیشن کا کردار ادا کرتے ، تو اس کے جواب میں بلوچستان کے اندر ان کی پارٹی اور ان کے ممبران کو حکومت کی طرف سے ایک لحاظ سے انتقام کا نشانہ بھی بنایا جارہاہے ۔

سلیم صافی نے کہا کہ اصل میں اس وقت سب سے بڑی تبدیلی یہ آئی ہے کہ جہانگیر ترین پس منظر سے ہٹ گئے ہیں ، موجود ہ حکومت کا رویہ بھی ان جیسے اتحادیوں کے ساتھ غیر مناسب تھا ،وزیراعظم نہ تو ان کو بلاتے تھے اور نہ ہی وقت دیتے تھے ، حکومت اور مینگل پارٹی کے درمیان جو بانڈ تھا جن کے ذریعے باتیں ہوتی تھیں وہ جہانگیر ترین تھے ، جہانگیر ترین جب درمیان سے ہٹ گئے تو ان کو تسلی دینے کیلئے بھی پی ٹی آئی میں کوئی نہیں تھا جس کے باعث انہوں ے مجبو ر ہو کر حکومت سے اتحاد ختم کرنے کا فیصلہ کیا ۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -