جیل میں مفت کھانا کھانے کیلئے بے روزگار شخص نے اپنے ہی بھائی کو قتل کرنے کا جھوٹا اعتراف کرلیا

جیل میں مفت کھانا کھانے کیلئے بے روزگار شخص نے اپنے ہی بھائی کو قتل کرنے کا ...
جیل میں مفت کھانا کھانے کیلئے بے روزگار شخص نے اپنے ہی بھائی کو قتل کرنے کا جھوٹا اعتراف کرلیا

  

کولکتہ(ویب ڈیسک) بھارت میں جنوبی کولکتہ کے بانسدرونی پولیس سٹیشن پر ایک بیروزگاری اور بھوک سے تنگ شخص نے جیل میں کھانا ملنے کی غرض سے اپنے بڑے بھائی کو قتل کرنے کا جھوٹا اعتراف کرتے ہوئے گرفتاری دے دی۔

بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق ایک چونکا دینے والے واقعے میں ایک شخص رات گئے جنوبی کولکتہ کے بانسڈرونی سٹیشن پر پولیس کے سامنے پیش ہوا اور اپنے بھائی کو قتل کرنے کا جھوٹا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ میں نے اپنے بڑے بھائی کو قتل کیا، مجھے گرفتار کرو، جس کے بعد پولیس ٹیم موقع پر پہنچی اور لاش برآمد کی، تاہم پوسٹ مارٹم کے بعد معلوم ہوا کہ بڑے بھائی کی موت دماغی فالج سے ہوئی تھی۔ .

میڈیا رپورٹس کے مطابق اس خوف سے کہ اس کا بے روزگار بھائی اس کی موت کے بعد بھوک سے مر جائے گا، اس نے اپنے بھائی سے کہا کہ وہ پولیس کے پاس جائے اور قتل کی  کہانی  سناتے ہوئے گرفتاری دے دے، اس نے اپنے بھائی سے کہا کہ اگر اسے قتل کے جرم میں عمر قید کی سزا سنائی گئی تو وہ حکومت کے خرچے پر عمر بھر جیل میں رہ کر کھانا کھا سکے گا، پولس اس بات کا بھی جائزہ لے رہی ہے کہ آیا چھوٹا بھائی شوبھاشس ذہنی دباؤ کا شکار ہے۔

پولیس کے مطابق یہ واقعہ بانسدرونی کے نرنجن پلی میں پیش آیا، مرنے والے کی شناخت دیبا شیس چکرورتی کے طور پر ہوئی ہے، ان کی والدہ یادو پور میں سیرامکس انسٹی ٹیوٹ کی ملازم تھیں۔

مزید :

بین الاقوامی -