جنوبی پنجاب سے بجلی ”ناراض“واپسی کیلئے گھنٹوں انتظار

جنوبی پنجاب سے بجلی ”ناراض“واپسی کیلئے گھنٹوں انتظار

  

کوٹ چھٹہ،حاصل پور،رحیم یار خان (بیو ر و رپورٹ،نمائندہ پاکستان،سٹی رپورٹر)واپڈا کی طر ف سے غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ زور پکڑ گیا۔ ملک بھر کی طرح اِدھر(بقیہ نمبر1صفحہ6پر)

 ڈیر ہ غازیخان سمیت تحصیل کوٹ چھٹہ میں بھی گرڈ اسٹیشنKV 132سے کئی کئی گھنٹے بجلی غائب رہتی ہے۔ جس سے نہ صرف شہری تڑپ اٹھے بلکہ واپڈا کے ڈویژن آفس سمیت سب ڈویژن میپکو کوٹ چھٹہ آفس کی بجلی معطل ہونے سے عملہ پریشان سائلین خوار تفصیل کے مطابق گذشتہ 3روز سے ملک بھر کی طرح اِدھر کوٹ چھٹہ میں بھی موجود گرڈ اسٹیشن 132 KVکے متعد د فیڈر مسلسل چار چار گھنٹے بند ہونے سے نہ صرف کاروبار زندگی متاثر ہوکر رہ گیا۔ بلکہ دیگر محکموں کے دفاتر میں بجلی نہ ہونے سے سائلین و عملہ پریشان حال ہیں۔ اِدھر بجلی بحران کے پیش نظر واپڈا کے ڈویژنل آفس اور سب ڈویژن میپکو کو ٹ چھٹہ آفس میں بھی بجلی نہ ہونے سے اکثر آن لائن سسٹم متعلق صارفین کے کام التواء کا شکار۔ عملہ گرمی سے بے حال صارفین بغیر کام واپس لوٹنے پر مایوسی کا شکار ہیں۔دریں اثناء لوڈشیڈنگ سے پریشان عوام پانی کی بوند بوند کو ترسنی لگی تین تین دن علاقوں میں پانی کی سپلای بند رہنے لگی حاصل پور کے سیاسی مذہبی حلقوں کے علاوہ پانی سے پریشان محمد رفیق فیاض احمد ودیگر نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ واٹر سپلای سکیموں پر تعینات سپروایزر مہر بلال نے اقربا پروری کی انتہا کی ہوی ہے اپنی مرضی اورتعلقات کو دیکھتے ہوئے پانی کی سپلای دیتا ہے اور دو دو گھنٹے پانی کی سپلای جاری رہتی ہے جس کی وجہ سے پانی ٹینکوں میں ختم ہو جاتا ہے اور دوسرے علاقے پانی سے محروم رہتے ہیں ااس بابت جب سپروایزر مہر بلال سے رابط کیا تو موصوف نے کہا کہ میں کسی کو جوابدہ نہیں مرضی کا مالک ہوں جس علاقے میں چاہوں گا پانی کی سپلای دوں گا حاصل پور کے شہریوں نے ڈی سی بہاولپور اسسٹنٹ کمشنر حاصل پور سے مطالبہ کیا ہے کہ ذمہ دار مہر بلال کو تبدیل کر کے کسی ذمہ دار شخص کو واٹر سپلای سپروایزر تعینات کیا جائے۔علاوہ ازیں چک نمبر24این پی دڑی چاچڑاں ودیگر چکوک میں لوڈشیڈنگ 23گھنٹے تک پہنچ گئی۔ علاقہ مکینوں نے روڈ بلاک کر کے واپڈا کے خلاف شدید احتجاج کرتے ہوئے بتایا کہ جمالدین والی مرکز کے فیڈر نمبر5میں بجلی کی بدترین لوڈشیڈنگ جاری ہے۔ 24گھنٹوں میں سے ایک گھنٹہ بجلی آتی ہے 23گھنٹے بجلی غائب رہتی ہے۔ علاقہ مکینوں کا کہنا ہے کہ اس شدید گرمی میں بجلی کی یہ آنکھ مچولی اذیت ناک ہے بجلی نہ ملنے کی وجہ سے انسانوں اور جانوروں کے پینے کا پانی تک نہیں ہے جس کی وجہ سے اہل علاقہ شدید پریشان ہیں۔ اہل علاقہ نے ایس ای واپڈا رحیم یارخان اور ایکسین واپڈا صادق آباد سے مطالبہ کیا ہے کہ ہمارے علاقہ کو معمول کے مطابق بجلی فراہم کی جائے تاکہ کاروبار زندگی بحال ہوسکے۔بجلی کی غیر اعلانیہ اور اتنی طویل لوڈ شیڈنگ کسی صورت قابل قبول نہیں ہے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -