گڈز اور پبلک ٹرانسپورٹرز کرایوں میں 35سے 40فیصد اضافہ

گڈز اور پبلک ٹرانسپورٹرز کرایوں میں 35سے 40فیصد اضافہ

  

 ملتان (سپیشل رپورٹر) ملک بھر میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافے کیخلاف مختلف شعبہ زندگی کے لوگ سراپا احتجاج بن گئے اور اس اضافے کے نتیجے میں فوری طور پر ملک بھر میں گڈز ٹرانسپورٹرز، پبلک ٹرانسپورٹرزنے کرایوں میں 35فیصد اضافہ کردیا ہے۔ بتایا گیا ہے پبلک ٹرانسپورٹرز نے لاہور سے باہر جانیوالی بسوں کے کرایوں میں 50 روپے سے 300 روپے فی سواری اضافہ کردیا ہے۔ جس سے غریب شہریوں کیلئے سفر کرنا انتہائی مشکل ہو کر رہ گیا ہے۔ لاہور سے سرگودھا جانیوالی بسوں کے کرائے بڑھ کر 900 روپے فی سواری، بہاولپور جانیوالی بسوں کے کرایے بڑھ کر 1200 روپے، لاہور سے ملتان جانیوالی بسوں کے کرائے بڑھ کر 1100 روپے سیالکوٹ جانیوالی بسوں کے کرائے بڑھ کر 600 روپے فی سواری ہوگئے ہیں جبکہ بعض ٹرانسپورٹروں کی جانب سے من مانے کرائے کا مطالبہ کرنے پر بس اڈوں پر ٹرانسپورٹروں اور سواروں کے درمیان تلخ کلامی کے واقعات کی اطلاعات بھی موصول ہوئی ہیں۔ اس حوالے سے پبلک ٹرانسپورٹرز کا کہنا ہے اگر حکومت نے انہیں کرائے بڑھانے کی اجازت نہ دی تو وہ بسیں بند کر دیں گے اسی طرح ملک بھر میں اشیاء ضروریہ کی ترسیل کرنیوالے گڈز ٹرانسپورٹروں نے بھی کرایوں میں 40 فیصد اضافہ کردیا ہے جس کے نتیجے میں لاہور اور کراچی کے درمیان گڈز ٹرانسپورٹ کا کرایہ 80 ہزار روپے سے بڑھ کر 1 لاکھ 10 ہزار روپے تک ہوگیا ہے۔ مزید برآں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافے کیخلاف تاجر برادری نے بھی شدید رد عمل کا اظہار اور اس خدشے کا اظہار کیا ہے کہ کرائے بڑھنے سے اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں بھی اضافہ ہو جائیگا۔ تاجر برادری کا کہنا ہے اگر ہمارے فیصلے آئی ایم ایف نے ہی کرنے ہیں تو انتخابات کا ڈھونگ ختم کیا جائے، ہماری حکومتیں کیا کر رہی ہیں۔ تاجر برادری نے مہنگائی کی اس لہر کو عمران خان دور حکومت پر بھی ذمہ داری عائد کی۔ 

ٹرانسپورٹرز

مزید :

صفحہ اول -