ای ڈی او تعلیم کے دفتر میں سال 2015ء میں 6 لاکھ سے زائد سائلین کی شکایات درج

ای ڈی او تعلیم کے دفتر میں سال 2015ء میں 6 لاکھ سے زائد سائلین کی شکایات درج

  

لاہور( خبرنگار) ای ڈی او تعلیم کے دفتر میں سال 2015ء میں 6 لاکھ سے زائد سائلین شکایات لے کر آئے جس میں لیڈیز اساتذہ کی تعداد زیادہ بتائی گئی ہے جس میں شالیمار ٹاؤن میں واقع 45 سکولوں کے میل اور فی میل ٹیچرز نے سب سے زیادہ شکایات درج کروائیں، جس میں گورنمنٹ ہائی سکول رام پورہ کے ہیڈ ماسٹر ملک صفدر حسین کے خلاف سکول کے 10 اساتذہ میں 8 اساتذہ نے ہیڈ ماسٹر کے رویے کے خلاف 50 سے زائد بار شکائیتیں درج کروائیں، لیکن ای ڈی او تعلیم لاہور کو ان شکایات سے بے خبر رکھا گیا اور الٹا شکایات کندگان اساتذہ کے خلاف انکواریوں میں انہیں گنہگار ٹھہرا دیا گیا۔ اسی طرح گورنمنٹ پرائمری سکول فتح گڑھ ، گورنمنٹ ہائی سکول شالیمار، گورنمنٹ پرائمری سکول جلو اور بھیسن کے سکولوں کے ہیڈ ماسٹروں اور دیگر ذمہ داروں کے خلاف ایف ٹی ایف فنڈز اور این ایس بی فنڈز کے استعمالمیں اختیارات سے تجاوز کے الزامات کی شکایات بھی درج کروائی گئیں جبکہ سال 2016ء کے 4ماہ میں 3 ہزار سے زائد لیڈیز ٹیچرز اس دفتر میں تنخواہوں میں کٹوتی، انکری منٹس اور تنخواہ کی بندش کے خلاف چکر لگاتی ہیں۔ اس دفتر میں سب سے اہم بات یہ ہے کہ ای ڈی او تعلیم لاہور اپنا دفتری اوقات ڈی سی او کے دفتر میں گزارتے ہیں، جبکہ شام کے اوقات میں دفتر کا چکر لگا کر افسران اور ماتحت ملازمین کو چھاڑ کر چلے جاتے ہیں، تاہم نئے ای ڈی او تعلیم طارق رفیق کے رویے کے بارے میں بہتری بتائی گئی ہے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -