وفاقی بجٹ میں سالانہ 50کروڑ سے زائد کمانیوالوں کیلئے ’’سپر ٹیس‘‘متعارف کر وا دیا جائیگا

وفاقی بجٹ میں سالانہ 50کروڑ سے زائد کمانیوالوں کیلئے ’’سپر ٹیس‘‘متعارف کر ...

  

لاہور ( اسد اقبا ل سے )وزارت تجارت،ایف بی آر اور حکو متی ٹیم کی جانب سے آئندہ مالی سال کے بجٹ برائے 2016-17کی تیاری کے اقدامات کو حتمی شکل دی جارہی ہے ۔ ابتدائی اطلاعات کے مطا بق آئندہ مالی سا ل برائے 2016-17کے وفاقی بجٹ میں سپر ٹیکس متعارف کروایا جارہا ہے جو سالانہ 50کروڑ روپے سے زیادہ کمانے والوں پر لگے گا ۔آئندہ مالی سال کے بجٹ میں سالانہ ٹیکس ہدف3600ارب سے زیادہ مقرر کئے جانے کا امکان ہے جبکہ 500ارب روپے کے نئے ٹیکس لگانے کی تجویز بھی زیر غور ہے ۔واضح رہے کہ آنیوالے بجٹ میں توانائی بحران پر قا بو اور نئے بجلی گھر بنا نے کیلئے اربو ں روپے مختص کر تے ہو ئے غیر ملکی سر مایہ کاری کو بھی فروغ دیا جائے گا جس کے لیے باقاعدہ منصو بہ بندی کر لی گئی ہے ۔ وزارت خزانہ کے ذرائع کے مطابق حکومت آئندہ بجٹ میں ٹیکس وصولی بہتر کرنے کے لیے خصو صی اقدامات پر غور کر رہی ہے۔ بجٹ برائے 2016-17میں گاڑیوں کی رجسٹریشن کی فیس میں اضافہ ہوسکتا ہے اور اس سلسلے میں وفاق اور صوبوں کو درمیان مشاورت ہورہی ہے۔نان فائلرزکیلئے ٹیکس ریٹ بڑھایاجائیگا۔نان فائلرزسے پراپرٹی کی خریدوفروخت پر2فیصدانکم ٹیکس لگے گااور ودہولڈنگ ٹیکس کی شرح0.6فیصدمقررکرنیکی تجویزہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ وفا قی حکو مت آئندہ مالی سال کے بجٹ میں معاشی اصلاحات کا ایجنڈا مکمل کر لے گی۔ غیر ضروری اخراجات میں کٹوتی اورمالیاتی استحکام کے زریعے بجٹ خسارہ پانچ فیصد سے کم کیا جائے گا جبکہ ٹیکس نیٹ کو توسیع دے کر حکومت کی آمدنی بہتر بنائی جائے گی تاکہ ترقیاتی کاموں کے لئے اضافی رقم میسر آ سکے۔بتا یا گیا ہے کہ آئندہ مالی سال کے بجٹ میں ایس آر او کلچر کا خاتمہ اور بجلی پر سبسڈی میں کمی اور افراط زر کو آٹھ فیصد سے کم رکھنے کا ارادہ بھی کیا گیا ہے تاکہ اقتصادی ترقی کی رفتار بڑھے گی۔ ترقیاتی کاموں کے لئے 50ارب روپے سے زیادہ رکھے جا رہے ہیں جس میں مقامی اور بین الاقوامی مواصلاتی رابطوں کو ترجیح دی جا رہی ہے۔آئندہ مالی سال کے بجٹ میں شرح نمو کم از کم پانچ فیصد ہو گی تاہم روپے کی قیمت میں استحکام حکومت کا بڑا امتحان ہو گا ۔

مزید :

صفحہ اول -