ضلعی حکام ،پرائس کنٹرول کمیٹی ناجائز منافع خوری روکنے میں ناکام

ضلعی حکام ،پرائس کنٹرول کمیٹی ناجائز منافع خوری روکنے میں ناکام

لاہور (رپورٹ :اسد اقبال)صوبائی دارالحکو مت میں ضلعی حکومت اور پرائس کنٹرول کمیٹی رمضان کی آمد پر ناجائز منافع خوروں اور ذخیرہ اندوزوں کو روکنے میں بری طرح ناکام ہو گئی ہے اور اوپن مارکیٹ میں ہوشر با اضافے کے پیش نظر اشیاء کی قیمتوں میں 40فیصد تک اضافہ ہو گیا ہے۔ اشیائے خور دونوش کی قیمتو ں میں ہو نے والے مصنوعی اضافے پر شہریو ں میں غم و غصہ کی لہر دوڑ گئی ہے ۔مکینوں نے مطالبہ کیا ہے کہ ضلعی حکومت لاہورکے خصوصی طور پر پسماندہ علاقوں میں منافع خور مافیا کے خلاف کر یک ڈاؤ ن کرے جبکہ نام کی پرائس کنٹرول کمیٹی اور سیاسی حوالے سے کی جانے والی چیئر مین کی تقرری کو ماہ رمضان میں عملی طورپر اپنے ٹھنڈے دفاتر سے نکل کر عوامی خدمت کے جذبے سے اپنے فرائض سر انجام دینا ہو نگے کیو نکہ بڑھتی ہوئی مہنگائی نے عوام کو افطار و سحر میں استعمال ہونے والی اشیائے خوردونوش کی بڑھتی ہوئی مصنوعی قیمتوں سے سر چکرانے لگے ہیں۔تفصیلات کے مطابق رمضان المبارک کی آمد کے ساتھ ہی لالچی مافیا متحرک ہو گیا ہے جنہوں نے زائد منافع کمانے کے لیے باقاعدہ حکمت عملی بنا رکھی ہے جس کا گزشتہ روز مشاہدہ ہوا ہے کہ صو بائی دارالحکومت سمیت ملک بھر میں ناجائز منافع خوروں اور ذخیرہ اندوزوں کی جانب سے شروع کی گئی اشیائے خوردونوش کی مصنوعی گرانی بھی عروج پر پہنچ گئی ہے۔ دوسری جانب حکومت ان ناجائز منافع خوروں و ذخیرہ اندوزوں کے خلافکوئی ایکشن لینے سے قاصر ہے، جس کی وجہ سے انہیں عوام کی چمڑی اتارنے کی کھلی چھٹی ملی ہوئی ہے۔ پاکستان رپورٹ کے مطابق مرغی جو ایک ماہ قبل 130روپے فی کلو گرام فروخت ہو رہی تھی کی قیمت آج بڑھ کر290روپے فی کلو گرام ہو گئی ہے ، لیموں200روپے،پیاز40روپے فی کلو گرام، میتھی 100 روپے ،سبز مرچ 90روپے بھنڈی80روپے فی کلو گرام، اروی100روپے فی کلو گرام،پھلو ں کی قیمتوں میں کیلا درجہ اورل 220روپے فی درجن،لو کھاٹ 200روپے فی کلو، سیب 250روپے فی کلو گرام، آم سندھڑی200روپے فی کلو گرام آلو بخارہ 400روپے فی کلو گرام، خوبانی 200روپے فی کلو گرام ،20روپے والا تربوز40روپے فی کلو گرام، خربوزہ60روپے فی کلو گرام جبکہ کھجور160روپے سے 250روپے فی کلو گرام تک نوٹ کی گئی۔اسی طرح شربت مشروبات فی بو تل کی قیمت میں 15روپے کا اضافہ اور تھوک منڈیوں میں ڈیلرز نے گھی درجہ اول کی قیمت میں 50روپے کا مصنوعی اضافہ کر دیا ہے ۔

مزید : صفحہ آخر