شوگر کے 90فیصدمریض روزہ رکھ سکتے ہیں، ماہرین صحت

شوگر کے 90فیصدمریض روزہ رکھ سکتے ہیں، ماہرین صحت
شوگر کے 90فیصدمریض روزہ رکھ سکتے ہیں، ماہرین صحت

  

کراچی (ویب ڈیسک) ماہرین صحت کاکہنا ہے کہ شوگر کے 90فیصد مریض روزہ رکھ سکتے ہیں ، 10فیصد ایسے مریض جنھیں روزہ رکھنے سے منع کیا گیا ہے ان میں ڈایلیسس ، شوگر کی حاملہ خواتین ، ناکارہ گردے والے مریض اور ضعیف العمر افراد شامل ہیں ، معروف ذیابیطس کے معالج پر وفیسر زمان شیخ کا کہناہے کہ رمضان میں شوگر والے مریض اپنے معالجین سے ادویہ کے اوقات کار تبدیل کر الیں اور انسولین والے افراد بھی اپنے معالج سے یونٹ اور اوقات تبدیل کریں۔

انھوں نے کہاکہ ذیابیطس ٹائپ ٹووالے افراد روزہ رکھ سکتے ہیں انھیں ابھی اپنے معالجین سے مشورہ کرنا ہوگا اور معالج کی ہدایت پر دواﺅں کے اوقات تبدیل کرنے ہونگے، انسولین لگانے والے مریض روزہ رکھ سکتے ہیں لیکن انھیں بھی اپنے ڈاکٹر سے مشورہ کرنا ہوگا روزے رکھنے سے قبل ڈاکٹر کی ہدایت کے مطابق انسولین کی خوراک تبدیل کرالیں، انھوں نے کہا کہ افطاراور سحری کے درمیان کم از کم 12گلاس پانی کا استعمال ضرور رکھیں کیونکہ آج کل موسم گرم ہے اور دن کے اوقات میں شدید گرمی کی وجہ سے نڈھال والی کیفیت ہوتی ہے لہٰذا افطار اور سحری کے درمیان پانی یا گھر کے ٹھنڈے مشروبات کا استعمالازمی رکھیں، سحری میں دہی کا استعمال مفید ہوگا۔

شوگر والے مریض روزے کے حالت میں اپنی شوگر چیک کر سکتے ہیں ، افطار میں تلی ہوئی اور زیادہ میٹھی اشیا کا زیادہ استعمال نقصان دہ ہو سکتاہے ، اعتدال کے ساتھ سحری و افطار کریں ، گھر کی فروٹ چاٹ مفید ہے ، کم عمر والے بچوں کو جو روزے رکھ رہے ہوں انھیں دھوپ میں ہر گز با ہر نہ نکلنے دیں ، ایسے بچوں کو گھروں میں رکھیں ، سحری میں دہی یا لسی کا استعمال کرائیں، سحری میں زیادہ مرغن غذائیں بد ہضمی کا باعث بن سکتی ہیں،اعتدال کے ساتھ سحری کریں اور افطار میں شوگر والے مریض زیادہ میٹھا کھانے سے پرہیز کریں تاہم وہ فروٹ چاٹ کا استعمال کر سکتے ہیں۔

مزید : علاقائی /سندھ /کراچی /Ramadan Page /Ramadan News