پاسکو اپنے مخصوص علاقوں میں گندم خریداری میں ناکام جدید سٹور بنانیکا کا منصوبوں بھی التواءکا شکار

پاسکو اپنے مخصوص علاقوں میں گندم خریداری میں ناکام جدید سٹور بنانیکا کا ...

ملتان(سپیشل رپورٹر)پاسکو اپنے مخصوص علاقوں میں گندم خرید کرنے میں ناکام ہوگیا ہے پاسکو ملتان زون اپنے مختص کردہ علاقوں میں (بقیہ نمبر53صفحہ12پر )

فصل گندم کی خریداری کرنے میں بری طرح ناکام ہوگیا ہے اب پاسکو کے علاقوں سے آڑتھی گندم خریدکرکے محکمہ خوراک کے سنٹروں پر فروخت کرنے لگے ہیں جس کی وجہ سے محکمہ خوراک کے سنٹروں پر گندم فروخت کرنے لگے ہیں اور خریداری اہداف بھی کافی حد تک پور ے ہونے کاامکان ہے ذرائع کے مطابق لودھراں سیمت دیگر پاسکو کے علاقوں کے زمیندار محکمہ خوراک کے علاقوں میں سنٹروں پر گندم فروخت کرنے کا انکشاف ہوا ہے محکمہ خوراک ملتان کے حکام نے گندم خریداری مراکز پر زرعی مارکیٹ کمیٹی ملتان سے ضروریات سے زائد سامان طلب کرلیا گیا جس میں شامیانے،کناتیں،کرسیاںایمرجنسی لائٹس،پانی کے کولرز دریاں،پنکھے تک کاسامان کرایہ پر لیا گیا ہے جس کااستعمال بہت کم کیا گیا ہے جس کی وجہ سے مارکیٹ کمیٹی اور ضلعی انتظامیہ کو مزکورہ سامان کرایہ کی مد میں بھاری معاوضہ ادا کرنا پڑے گا جبکہ اس سامان سے صرف آڑتھی اور محکمہ خوراک کے اہلکار فائدہ اٹھارہے ہیں۔حکومت پنجاب صوبے بھر میں ضرورت سے زائد گندم کودوتین سال کیلئے سٹاک کرنے کیلئے جدید ترین سٹور تعمیر کرنے کا منصوبہ گزشتہ دو سالوں سے التوا کا شکار ہے جس میں ایک سال کی ملکی ضرورت کی گندم کوسٹور کرنے کی صلاحیت ہونی چاہیے اس طرح گندم کی ملکی ضرورت کو سٹور کرکے باقی ماندہ گندم کو افغانستان،ایران سمیت دنیا کے دیگر ممالک میں ملکی گندم ایکسپورٹ کی جانی تھی اس سے کسانوں کو مارکیٹنگ کے مسائل سے بچایا جاسکتا ہے گندم کے ترقی پسند کاشتکاروں میاں مظہر عباس گلشن،میاں احسن زوار نے کہا ہے کہ ملکی ضروریات سے زائد گندم کوایکسپور ٹ کرنے حکومتی اور پرائیویٹ سیکٹر مل کرکام کرے حکومت کسانوں کو بھی اپنی اجناس فری ایکسپورٹ کرنے کی سہولیات فراہم کرے تب جاکر زرعی مارکیٹنگ نظام بہتر بنایا جاسکتا ہے گندم کی خریداری بحران سے کسانوں کو اربوں روپے کا خسارہ پہنچایا جاتا ہے

پاسکو

مزید : ملتان صفحہ آخر