ایپکا کے مطالبات منظور نہ ہوئے تو دھرنے پر مجبور ہو جائیں گے،حاجی ارشاد

ایپکا کے مطالبات منظور نہ ہوئے تو دھرنے پر مجبور ہو جائیں گے،حاجی ارشاد

  

لاہور(سٹی رپورٹر) حکومت ایپکا کے چارٹر آف ڈیمانڈ کی منظوری دے ورنہ اسلام آباد میں بھوک ہڑتالی احتجاجی دھرنا دینے پر مجبور ہو جائیں گے جس میں سماجی فاصلے کا خیال رکھتے ہوئے دھرنا دیا جائے گا ان خیالات کا اظہارایپکا پاکستان کے مرکزی صدر حاجی محمد ارشاد چودھری نے ایپکا کے مشاورتی اجلاس کے دوران کیا۔انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کی حکومت دو نہیں ایک پاکستان کے اپنے ہی ویژن کی پاسداری کرتے ہوئے بجٹ پیش کرنے سے پہلے انصاف پر مبنی سرکاری ملازمین کی بالحاظ عہدہ (سکیل،تنخواہ اور الاؤنسز) یکساں کرنے کا تاریخ ساز اعلان کرے۔تمام ایڈہاک الاؤنس ضم کرنے،یوٹیلٹی الاؤنس بلا امتیاز دینے کا اعلان کیا جائے۔

  

، ہاؤس رینٹ 2008 کی بجائے2020ء کے نئے سکیلوں پر 60 فیصد،کنونس اور میڈیکل الاؤنس میں اضافہ اور ایپکا کے پیش کردہ دیگر مطالبات،یوٹیلٹی الاؤنس،150% ایگزیکٹو الاؤنس،گروپ انشورنس ریٹائیرمنٹ پر دینے اور تمام امتیازی سلوک کے خاتمہ کی منظوری کا اعلان کیا جائے۔ حاجی محمد ارشاد چوہدری نے مزید کہا کہ حکومت نے اگر چارٹر آف ڈیمانڈ کی منظوری اور اس پر عملدرآمد نہ کروایا تو اسلام آباد پارلیمنٹ ہاؤس کے سامنے سماجی فاصلے کے تحت بھوک ہڑتالی دھرنا دینے پر مجبور ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ سرکاری ملازمین کے ساتھ امتیازی سلوک کے خاتمہ اور حقوق کے حصول کیلئے کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کیا جائے گا۔انہوں نے کہا اسلام آباد میں اگر دھرنا دیا گیا تو اس میں ملک بھر سے ایپکا کے عہدیداران، ممبران اور کارکنان کو بھرپور شرکت کی کال دی جائے گی۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -