مشکل وقت میں بھی مسکراتے رہنا چاہئیے،اداکارہ صائمہ نور

مشکل وقت میں بھی مسکراتے رہنا چاہئیے،اداکارہ صائمہ نور

  

لاہور (فلم رپورٹر)سینئراداکارہ و ماڈل صائمہ نورنے کہا ہے کہ مسکراہٹ ایک ایسا عمل ہے جس سے آپ دوسروں کو متاثر کر سکتے ہیں اور اسی مسکراہٹ کی وجہ سے آپ اپنے دوستوں میں زیادہ مقبول ہوتے ہیں جبکہ ہمیں اپنے بزرگوں کا بھی دل و جان سے احترام کرنا چاہیے۔حالات کیسے بھی ہوں مسکراہٹ سے آپ دوسروں کو متاثر کر سکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہمیں صرف یہ دن ہی نہیں منانا بلکہ عہد کرنا چاہیے کہ ہم خود اپنی ذات میں ایسی مثبت تبدیلیاں لائیں گے جس کے اثرات معاشرے میں بھی پڑیں۔ صائمہ نورنے کہا کہ یورپی اقوام کے باشندے ایک دوسرے کو دیکھ کر مسکراہتے ہیں اور اسی لئے ان کے چہرے بھی ہشاش بشاش ہوتے ہیں۔ سائنسی اعتبار سے بھی یہ بات ثابت ہو چکی ہے کہ مسکرانے والے لوگوں کے چہروں پربڑھاپے کے عالم میں بھی جھریاں نہیں پڑتیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کے لوگوں کو بہت سے مسائل کا سامنا ہے مگر اس کا ہرگز یہ مطلب نہیں کہ لوگ مسکرانا ہی چھوڑ دیں۔صائمہ نورنے کہا کہ مسکراہٹ ایک ایسا عمل ہے جس کی وجہ سے آپ دوسروں کے دلوں میں اپنا گھر کر لیتے ہیں۔ لوگوں کو مسکرا کر ایک دوسرے سے بات کرنی چاہیے۔

س سے معاشرے میں مثبت رحجان فروغ پائے گا۔صائمہ نورنے کہا کہ بحیثیت مسلمان ہمیں اپنے بزرگوں کا دل و جان سے احترام کرنا چاہیے اور اگر وہ کوئی تلخ بات بھی ہم سے کہہ دیں تو مسکرا کر ہمیں اسے نظر انداز کر دینا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ ہمارے بزرگوں نے ہمارے لئے بہت کچھ کیا ہے اب وقت کا تقاضا ہے کہ ہم اپنے بزرگوں کا قرض کس طرح اتاتے ہیں انہوں نے کہا کہ جو لوگ اپنے والدین کو اولڈ ہوم میں چھوڑ آتے ہیں میرے نزدیک وہ انسان کہلانے کے بھی حقدار نہیں۔

مزید :

کلچر -