کوویڈ 19کیخلاف جنگ میں فرنٹ لائن ورکرز کیلئے امداد

  کوویڈ 19کیخلاف جنگ میں فرنٹ لائن ورکرز کیلئے امداد

  

لاہور(پ ر)سائبر نیٹ کے زیر انتظام معروف کنزیومر براڈ بینڈ سروس StormFiber نے دوسروں کی زندگی بچانے کیلئے اپنی زندگیوں کو خطرے میں ڈالنے والے ورکرز کیلئے اپنے تعاون کو آگے بڑھایا ہے۔ یہ ورکرز کورونا وائرس وباء کے خلاف فرنٹ لائن پر کام کر رہے ہیں۔ کمپنی نے ملک بھر میں صحت کی دیکھ بھال، سیکورٹی، آئسولیشن اور قرنطینہ سہولیات تک پرسنل پروٹیکٹو ایکوئپمنٹ (PPE) کٹس اور حفاظتی پوشاک (پروٹیکٹو گیئر) کی تقسیم کا اعلان کیا ہے۔ StormFiber کے منیجنگ ڈائریکٹر فواد یوسف لہر نے کہا کہ آئسولیشن سینٹرز اور ہسپتالوں کو پرسنل پروٹیکٹو ایکوئپمنٹ کی تقسیم کے ذریعے ہم اس بحران میں اپنا کردار ادا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ اس اقدام کا مقصد صحت کی دیکھ بھال کرنے والے ورکرز کے ساتھ اپنی مدد اور یکجہتی کا اظہار کرنا ہے جو ہر روز اپنی جانوں کو خطرے میں ڈالے ہوئے ہیں۔ StormFiber کی جانب سے تقسیم کی جانے والی PPE کٹس ڈبلیو ایچ او کی گائیڈ لائنز کے مطابق اعلیٰ معیار کی ہیں۔ کسی عام کٹ کے برعکس یہ کٹس لمینیٹڈ ہیں تاکہ فضاء میں معلق مادی ذرات کے خلاف شامل کئے گئے تحفظ کے ذریعے اس کے طویل استعمال کو یقینی بنایا جا سکے۔ اپنی کاروباری موجودگی سے قطع نظر StormFiber یہ کٹس ہسپتالوں، دور دراز علاقوں سمیت ملک بھر میں آئسولیشن/قرنطینہ سہولیات کو فراہم کر رہا ہے جہاں PPE کی دستیابی تاحال ایک چیلنج ہے۔ جن شہروں میں کٹس تقسیم کی گئیں ان میں کراچی، لاہور، فیصل آباد، ملتان، پشاور، گوجرانوالہ، سیالکوٹ، حیدر آباد، کوئٹہ اور مردان شامل ہیں۔

سیالکوٹ کی ڈسٹرکٹ ہیلتھ ایڈوائزری کے چیئرمین زاہد سلیم باجوہ نے کہا کہ سائبر نیٹ کی ٹیم کی موجودگی میں ہم نے سیالکوٹ کے صحت سے متعلق تین اداروں کو حفاظتی سامان فراہم کیا۔ انہوں نے کہا کہ میں حکومت پنجاب کے نمائندے کی حیثیت سے سائبر نیٹ کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ اس بحران کے وقت اس نے ڈاکٹروں، نرسوں، پیرا میڈیکل اسٹاف اور 1122 ورکرز سمیت فرنٹ لائن ورکرز کی مدد کی۔ عالمی ادارہ صحت کی حالیہ صورتحال کے بارے میں رپورٹ کے مطابق پاکستان میں ڈاکٹرز اور دیگر طبی عملہ عالمی سطح پر دیگر عملہ کی نسبت زیادہ متاثر ہوا ہے۔ اب تک ملک میں Covid-19 کی وجہ سے 600 سے زائد طبی عملہ متاثر ہو چکا ہے جن میں سے 50 فیصد سے زائد ڈاکٹرز ہیں۔ اس متعدی بیماری میں مبتلا ہونے کی بنیادی وجہ پرسنل پروٹیکٹو گیئر کا فقدان ہے۔

مزید :

کامرس -