ہوائی جہاز بحر اوقیانوس اور ماﺅنٹ ایورسٹ کے اوپر کیوں نہیں اڑتے؟ حیران کن وجہ آپ بھی جانئے

ہوائی جہاز بحر اوقیانوس اور ماﺅنٹ ایورسٹ کے اوپر کیوں نہیں اڑتے؟ حیران کن ...
ہوائی جہاز بحر اوقیانوس اور ماﺅنٹ ایورسٹ کے اوپر کیوں نہیں اڑتے؟ حیران کن وجہ آپ بھی جانئے

  

نئی دلی (ڈیلی پاکستان آن لائن) ہوائی جہاز بحر اوقیانوس اور دنیا کی بلند ترین پہاڑی چوٹی ماﺅنٹ ایورسٹ کے اوپر سے پرواز بھرنے سے احتراز برتتے ہیں ، لیکن کبھی آپ نے سوچا ہے کہ آخر ان جگہوں کے اوپر سے اڑان کیوں نہیں بھری جاتی ہے؟اس حوالے سے ایک Quora صارف نے انتہائی دلچسپ وجہ بیان کی ہے۔

Quora پر دیبا پریو مکھرجی نامی صارف نے بتایا کہ اکثر کمرشل فلائٹس ہمالیہ کے اوپر ڈائریکٹ پرواز نہیں کرتیں کیونکہ ہمالیہ کے اکثر پہاڑ 20 ہزار فٹ سے زائد بلند ہیں جبکہ ماﺅنٹ ایورسٹ کی بلندی 29 ہزار 35 فٹ ہے، اکثر کمرشل فلائٹس 30 ہزار فٹ کی اونچائی پر پرواز کرتی ہیں۔

اگر پروازوں کو ہمالیہ کے اوپر سے گزرنا ہے تو انہیں مزید اونچائی پر جانا پڑے گا جہاں سٹارٹو سفیر شروع ہوجاتی ہے۔ سٹارٹو سفیر میں آکسیجن لیول کم ہوجاتا ہے جس کے باعث جہاز میں ٹربلنس ہوگی اور مسافروں کو سانس لینے میں دشواری کا سامنا کرنا پڑے گا، اس کے علاوہ وہاں ہوا کا دباﺅ بہت زیادہ ہوگا جس کے باعث اڑان بھرنا خطرات سے خالی نہیں ہوگا۔

خاتون صارف نے بتایا کہ پروازیں سمندری حدود کی بجائے خشکی پر سفر کرنے کو ترجیح دیتی ہیں جس کا مقصد ایمرجنسی لینڈنگ کو آسان بنانا ہے۔ ایمرجنسی لینڈنگ ہموار زمین پر کی جاتی ہے لیکن ہمالیہ میں صرف پہاڑ ہی ہیں جس کی وجہ سے ایمرجنسی لینڈنگ ممکن نہیں رہ پاتی۔

ایک اور وجہ بیان کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جہاز میں صرف 20 منٹ کیلئے آکسیجن ہوتی ہے ، 30 ہزار فٹ سے زیادہ بلندی پر جانے کے باعث جہاز میں آکسیجن کی کمی ہوجائے گی جس کے باعث اسے 10 ہزار فٹ کی سطح پر آنا ہوگا ، اس عمل کو ڈرفٹ ڈاﺅن پروسیجر کہتے ہیں، اور ہمالیہ میں ایسا کرنا خود کشی سے کم نہیں ہوگا۔اس کے علاوہ ہمالیہ ریجن میں بھارتی اور چینی افواج کے لڑاکا طیارے جنگی مشقیں کرتے رہتے ہیں جس کے باعث عام کمرشل فلائٹس کیلئے یہاں سے اڑنا ممکن نہیں ہے، یہ ایک طرح سے نو گو ایریا ہے۔

بحر اوقیانوس کے اوپر کمرشل فلائٹس کی پروازیں کم ہونے کی وجہ بیان کرتے ہوئے Quora صارف نے بتایا کہ ہوائی جہاز ہمیشہ سیدھے راستے کی بجائے آڑے ٹیڑھے رستوں کا انتخاب کرتے ہیں ، اس کی وجہ سے سفر کم ہوتا ہے۔ اس کی مثال دیتے ہوئے خاتون نے بتایا کہ ’زمین ہموار نہیں بلکہ گول ہے اس لیے سیدھا سفر دراصل سیدھا نہیں ہوتا، آپ ایک گلوب لیں اور اس پر مارکر کے ذریعے امریکہ سے وسطی ایشیا تک سیدھی لائن لگائیں، پھر آپ جہازوں والے راستے کو نشان زدہ کریں ، آپ یہ دیکھ کر حیران رہ جائیں گے کہ آڑے ترچھے روٹ کی وجہ سے یہ راستہ مختصر ہوگیا ہے۔‘

مزید :

ڈیلی بائیٹس -