سارے الزام آگئے مجھ پر۔۔۔

سارے الزام آگئے مجھ پر۔۔۔
سارے الزام آگئے مجھ پر۔۔۔

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

چاند تاروں سے دوستی ٹھہری
دل کے آنگن میں روشنی ٹھہری

توٗ کہ ٹھہرا اک آبشارِ حسیں
میرے ہونٹوں پہ تشنگی ٹھہری

سارے الزام آگئے مجھ پر
اِک خطا بھی نہ آپ کی ٹھہری

وقت منظر بدلتا رہتا ہے
کس کے رُخ پر شگفتگی ٹھہری

کیوں لگا جھوٹ تیرا سچ مجھ کو
کیوں لگی دل کی دل لگی ٹھہری

اُن سے بچھڑے تھے جس گھڑی راغبؔ
کیا رہے گی وہیں گھڑی ٹھہری

کلام :افتخار راغب (دوحہ ، قطر )

مزید :

شاعری -