دنیا کے انوکھے شکاریوں کی دلچسپ داستان

دنیا کے انوکھے شکاریوں کی دلچسپ داستان
دنیا کے انوکھے شکاریوں کی دلچسپ داستان

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

الان بالتر (نیوز ڈیسک) مہنگے شکاری عقابوں کو پالنے اور ان سے شکار کھیلنے کے حوالے سے عام طور پر مشرق وسطیٰ کے امراءکا تصور ذہن میں ابھرتا ہے لیکن منگولیا میں آباد میں ایک قبیلہ اس شوق کے اعلیٰ ترین مقام پر فائز ہے۔
مغربی منگولیا کے التائی پہاڑوں قارق نسل کے لوگ آباد ہیں جن کا شوق نایاب سنہرے عقابوں کو پالنا، ان کی تربیت کرنا اور ان سے شکار کا کام لینا ہے۔ یہ شوق دنیا میں صرف اس قبیلے اور علاقے تک ہی محدود ہے اور آج یہاں صرف 400 ماہر عقاب مالکان موجود ہیں۔ ہر سال اکتوبر کے مہینے میں یہاں ایک میلہ منعقد کیا جاتا ہے جس میں عقاب مالکان اپنے اپنے تربیت یافتہ عقابوں کے ساتھ شرکت کرتے ہیں۔ سب مالکان اپنے اپنے گھوڑے پر بیٹھ کر ہاتھ میں گوشت کے ٹکڑے اٹھالیتے ہیں اور پھر ان کے عقابوں کو ایک پہاڑی سے چھوڑا جاتا ہے۔ مالکان اور عقاب اس دوران باریک تیز آوازیں نکال کر ایک دوسرے سے رابطہ کرتا اور جس کا عقاب سب سے پہلے اس تک پہنچ جائے وہ جیت جاتا ہے۔
یہ لوگ سنہرے عقاب کے مادہ بچے کو جنگل سے پکڑ لیتے ہیں اور پھر اسے کئی روز تک بھوکا رکھتے ہیں۔ بالآخر یہ بچہ انسانوں کی دی ہوئی خوراک کھانے پر مجبور ہوجاتا ہے اور پھر آہستہ آہستہ یہ انسانی خاندان کا حصہ بن جاتا ہے۔ اس کی سخت تربیت کی جاتی ہے اور تقریباً 8 سے 10 سال تک مالک کے ساتھ مقابلوں میں شرکت کے بعد اسے نسل جاری رکھنے کیلئے دوبارہ جنگل میں چھوڑ دیا جاتا ہے۔ اس قبیلے میں یہ روایت صدیوں سے چلی آرہی ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -