پنجاب میں گنے کے کرشنگ سیزن کا آغاز رواں ماہ کے آخری ہفتے کیا جائیگا

پنجاب میں گنے کے کرشنگ سیزن کا آغاز رواں ماہ کے آخری ہفتے کیا جائیگا

لاہور(کامرس رپورٹر)صوبہ پنجاب میں گنے کے کرشنگ سیزن کا آغاز رواں ماہ کے آخری ہفتے ہو جائیگا جبکہ کرشنگ سیزن کے آغاز سے قبل گنے کی امدادی قیمت کا بھی اعلان کر دیا جائیگا۔ محکمہ خوراک پنجاب کے ترجمان نے بتایا کہ شوگر ملیں کنٹرول ایکٹ 1950ء کے تحت کرشنگ سیزن کا آغاز یکم اکتوبر سے 30 نومبر کے درمیان ہونا ہوتا ہے اور اگر 30 نومبر تک کوئی شوگر مل کرشنگ شروع نہیں کرے گی تو اس کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کی جائے گی۔ انہوں نے بتایا کہ کسانوں کو گنے کی بروقت اور مقرر کردہ نرخوں پر ادائیگی یقینی بنانے کیلئے حکومت ہر ممکن اقدامات کرتی ہے۔ اس سلسلہ میں ضلعی سطح پر ڈسٹرکٹ شوگر کین پرچیز‘ مانیٹرنگ اینڈ ایگزامینگ کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جس کا چیئرمین متعلقہ ضلع کا ڈی سی او ہوتا ہے جبکہ ممبران میں متعلقہ ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر‘ تحصیل کا اسسٹنٹ کمشنر اور کاشتکاروں کے نمائندے شامل ہوتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ان کمیٹیوں کی طرف سے گزشتہ سیزن میں 13924 کین پرچیز سنٹرز کی انسپکشن کی گئی جبکہ کم تول کی 133 اور گنے کی قیمت کی کم ادائیگی کی 47 شکایات موصول ہوئیں۔

نیز مختلف شکایات پر 171 پرچیز سنٹر ز سیل کئے گئے۔ علاوہ ازیں 154 خریداری مراکز کے خلاف پراسیکیوشن اور مقدمات کا اندراج کیا گیا جبکہ مجموعی طور پر 9 لاکھ 37 ہزار روپے جرمانہ کیا گیا۔ گنے کی مقرر ہونیوالی امدادی قیمت کے مطابق شوگر مل اورخریداری مراکز پر کسانوں کو ملنے والے معاوضہ میں فرق کے حوالے سے انہوں نے بتایاکہ قانون کے مطابق شوگر ملز سے 40 کلومیٹر کے اندر اندر خریداری مرکز پر مقررہ قیمت کے مطابق کسانوں کی ادائیگی ہونا ہوتی ہے اور 40 کلومیٹر سے زیادہ فاصلے پر فی 100 کلو گرام 1.25 روپے ٹرانسپورٹیشن کی مد میں خریداری مراکز پر کاشتکاروں سے وصول کئے جاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس سلسلے میں شکایات کی صورت میں کاشتکار متعلقہ ضلعی کمیٹی کو اپنی شکایات درج کروا سکتے ہیں جو ان کی شکایات کا ازالہ کرتی ہے۔

مزید : کامرس