نصیر آباد کے علاقے چپ شاہ مزار کے مکین واٹر فلٹریشن پلانٹ چالو نہ ہونے پر سراپا احتجاج

نصیر آباد کے علاقے چپ شاہ مزار کے مکین واٹر فلٹریشن پلانٹ چالو نہ ہونے پر ...

 لاہور( اسد اقبال۔ تصاویر، ذیشان منیر)ساندہ کلاں نصیر آباد کے علاقے چپ شاہ مزار میں دو سال سے نصب کیا جانے والا واٹر فلٹر یشن پلانٹ چالو نہ ہو سکا، علاقہ مکینوں ، سماجی و دینی رہنماؤں نے واسا کے اس اقدام کی پرزور مذمت کر تے ہوئے باآور کروایا ہے کہ حکو مت کی جانب سے گندے علاقے میں واٹر فلٹر یشن پلانٹ جو نعمت سے کم نہیں کو کسی صورت سیاست کی نظر نہیں ہونے دیں گے ۔تفصیلات کے مطابق حکو مت پنجاب کی ہدایت پر لاہور سمیت پنجاب کے مختلف شہروں میں واٹر فلٹریشن پلانٹ کی تنصیب کا سلسلہ شروع کیا گیا جس کے تحت نصیر آباد کے علاقے میں بھی واٹر فلٹر یشن پلانٹ کی منظوری 2009میں دی گئی جس کے بعد معاملہ جو ں کا تو ں رہا اور بالآخر 2014کو چپ شاہ مزار سٹریٹ نمبر 35ساندہ کلاں نصیر آباد میں واٹر فلٹر یشن پلانٹ کی تنصیب کے لیے مشینری لائی گئی جو تقریبا دو سال گزرنے کے باوجو د بور کے باعث نہ لگائی گئی علاقہ مکینوں اور سماجی رہنماؤں کی جانب سے تحریری و زبانی گزارشات کر نے کے باوجود علاقہ کے مکینوں کو صاف پانی مہیا کر نے کے لیے اس پر تو جہ نہ دی گئی۔جس کے بعد علاقے کے سماجی رہنماء محمد جمیل نے مکینوں کی مدد سے اپنی مد د آپ کے تحت واٹر فلٹریشن پلانٹ کے لیے بور کا کام شروع کر دیا جس کے لیے مکینوں نے ایک لاکھ روپے سے زائد رقم خرچ کی ۔مکینوں کا کہنا ہے کہ گزشتہ روز ایس ڈی او واسا ریوارز گارڈن شیخ عظمت کے اہلکاروں کے ہمراہ واٹر فلٹر یشن پلانٹ کو چالو کروانے کا کام روکنے کے احکامات جاری کیے جس پر مکینوں میں تشو یش اور غم و غصہ کی لہر دوڑ گئی اور ایس ڈی اوواسا کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کر تے ہوئے باآور کروایا کے عوامی منصو بے کو سیاست کی نظر نہیں ہو نے دیں گے ۔ جوائے شاہ روڈ کے مکینوں محمد ندیم ، عدیل ، محمد حسین ، ماجد حسین، محمد زاہد حسین ، محمد جمیل ، شمشیر علی ، عامر بٹ ، محمد بابر ، عامر، خالد ، راناجاوید، محمد فہیم ، عادل ،دانش اور غلام فاطمہ کا کہنا تھا کہ ہم نے ایک ایک پیسہ اہل علاقہ سے اکٹھا کر کے پلانٹ کے لیے بور کروانا شروع کیا ہے ۔ مکینو ں کا کہنا تھا کہ جوائے شاہ روڈ ، افضال روڈ ، نصیر آباد ، مسلم پورہ ،حکیماں والا بازار ، عمر روڈ ، بیری والا چو ک اور تاج چو ک سمیت دیگر ملحقہ علاقوں کے ہزاروں شہری فلٹر یشن پلانٹ کے صاف پانی سے مستفید ہو سکتے ہیں کیو نکہ ان علاقوں میں سیوریج کا پر انا نظام ہو نے سے گھروں میں آنے والا پانی نہایت ہی گندہ اور مضر صحت ہے جس کے پیش نظر علاقہ کے کئی افراد پیٹ کی مختلف بیماریوں کا شکار ہو چکے ہیں ۔ انھوں نے مطالبہ کیاکہ اگر حکو مت اور متعلقہ ادارے فلٹر یشن پلانٹ چالو نہیں کروا سکتے تو کم از کم اپنی مدد آپ کے تحت شروع کیے جانے والے عوامی کام کی راہ میں رکاوٹ نہ بنیں۔ایس ڈی او واسا شیخ عظمت کا کہنا ہے کہ مذکورہ فلٹر یشن پلانٹ ہمارے دائرہ اختیار میں نہیں آ تا ۔واسا نے فلٹر یشن پلانٹ کو چالو نہ کرنے کا مشورہ صرف عوامی صحت کو ملحو ظ خاطر رکھ کر کیا ہے کیونکہ اس علاقے میں کم از کم 740فٹ بور کیا جائے تو پانی پینے کے قابل ہو سکتا ہے جبکہ اہل علاقہ اسے کم بور پر کروا کر چالو کروانا چاہتے ہیں ۔ انھوں نے کہا کہ اہل علاقہ کو چائیے کہ وہ فلٹر یشن پلانٹ کے لیے پانی واسا ٹیو ب ویل سے حاصل کریں ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1