برطانیہ میں پاکستانی شہری کی افسوسناک حرکت، دھوکے سے یورپی خاتون سے شادی کے بعد ایسا کام کہ جان کر کسی کو بھی غصہ آجائے

برطانیہ میں پاکستانی شہری کی افسوسناک حرکت، دھوکے سے یورپی خاتون سے شادی کے ...
برطانیہ میں پاکستانی شہری کی افسوسناک حرکت، دھوکے سے یورپی خاتون سے شادی کے بعد ایسا کام کہ جان کر کسی کو بھی غصہ آجائے

  

لندن (نیوز ڈیسک)مغربی ممالک کی شہریت کے حصول کے لئے ان ممالک کا رخ کرنے والے تارکین وطن میں جعلی شادیوں کا رجحان عام دیکھنے میں آتا ہے اور بدقسمتی سے اس جعلسازی میں پاکستان سے جانے والے تارکین وطن کا نام بار بار سامنے آتا ہے۔ عموماً تو یہ معاملہ جعلی شادی تک ہی محدود ہوتا ہے لیکن بعض اوقات اس کے ساتھ ایسے اندوہناک جرائم بھی منسلک ہوتے ہیں کہ جن کی وجہ سے ناصرف جعلی شادیوں کے چنگل میں پھنسائی گئی خواتین کی زندگی برباد ہوجاتی ہے بلکہ ان کے ساتھ ظلم کرنے والے افراد کے اپنے ممالک کے لئے بھی بے پناہ شرمندگی پیدا ہوتی ہے۔ ایک ایسا ہی افسوسناک واقعہ لیٹویا سے ملازمت کا جھانسہ دے کر بلائی گئی ذہنی مسائل کی شکار دوشیزہ کے ساتھ پیش آیا ہے جسے شادی کے نام پر 14 مہینوں تک قید و بندکی صعوبتوں میں مبتلا رکھا گیا، جبکہ اس دوران اس کی عصمت دری بھی کی جاتی رہی۔

مزید جانئے: دنیا کا" امیر ترین" مسلمان، لاہور کا " شہزادہ " جو ہمارے درمیان رہتا ہے لیکن آپ کو معلوم نہیں

جریدے ڈیلی میل کے مطابق 36 سالہ خاتون کو ملازمت کا جھانسہ دے کر برطانیہ بلوایا گیا اور پھر 32 سالہ پاکستانی نوجوان محمد اکمل نے اس کے ساتھ زبردستی شادی کر لی۔ عدالت کو بتائی گئی تفصیلات کے مطابق اکمل انسانی سمگلروں کے ایک گروہ کا حصہ ہے اور اس نے دھوکہ بازی اور جعلسازی سے خاتون کو طویل عرصے تک اپنی تحویل میں رکھا۔ عدالت نے اکمل کو 20 ماہ قید کی سزا سنائی ہے جس کے بعد اسے برطانیہ سے نکال دیا جائے گا،جبکہ اس کے بہنوئی رشید احمد، جو کہ جعلی شادی میں گواہ تھا، کو نوماہ کی سزا سنائی گئی ہے۔

جریدے ڈیلی میل کے مطابق سمگلروں کے گینگ کا نشانہ بننے والی دوشیزہ گھر میں آنے والے ایک خط پر لکھا ہوا پتا اپنی والدہ کو بھیجنے میں کامیاب ہوگئی جس کے بعدپولیس کو اس جگہ کا علم ہوا جہاں خاتون کو قید کیا گیا تھا۔ مانچسٹر کے ایک گھر میں کارروائی کرتے ہوئے پولیس نے اسے بازیاب کروالیا۔ جریدے کے مطابق گینگ کے ارکان میں سے اکثر کا تعلق پاکستان سے ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس