شریف خاندان کے افراد کی کوٹ لکھپت جیل میں قید مریم نواز سے ملاقات،ڈاکٹر عدنان کو ملاقات سے روکدیا گیا

شریف خاندان کے افراد کی کوٹ لکھپت جیل میں قید مریم نواز سے ملاقات،ڈاکٹر ...
شریف خاندان کے افراد کی کوٹ لکھپت جیل میں قید مریم نواز سے ملاقات،ڈاکٹر عدنان کو ملاقات سے روکدیا گیا

  



لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن) شریف خاندان کے افراد نے کوٹ لکھپت جیل میں قید مریم نواز سے ملاقات کر کے ان کی خیریت دریافت کی،ڈاکٹر عدنان کو مریم نواز سے ملاقات سے روک دیا گیا،دوسری طرف حسین نواز شریف نے کہا ہے کہ اگر ان کی بہن مریم نواز کو جیل میں کچھ ہوا تو وزیر اعلیٰ عثمان بزدار اور انتظامیہ کے تمام افسر اس کے ذمہ دار ہوں گے۔

تفصیلات کے مطابق چوہدری شوگر ملز کیس میں گرفتار مسلم لیگ (ن) کی مرکزی رہنما مریم نواز سے ان کے بیٹے، بیٹیوں اور دیگر اہل خانہ نے کوٹ لکھپت جیل میں ملاقات کر کے ان کی خیریت دریافت کی۔مریم نواز کے شوہر کیپٹن(ر) محمد صفدر شہر سے باہر ہونے کی وجہ سے ملاقات کے لئے نہ آ سکے تاہم ان کے صاحبزادے جنید صفدر نے جیل میں اپنی والدہ سے ملاقات کی ،ملاقات کے اختتام پر جیل کے باہر موجود ن لیگی کارکنوں نے جنید صفدر کی گاڑی پر پھولوں کی پتیاں نچھاور کیں۔اس سے قبل جیل حکام نے ڈاکٹر عدنان کو مریم نواز سے ملاقات کی اجازت دینے سے انکار کر دیا۔جیل حکام نے موقف اپنایا کہ ڈاکٹر عدنان کو ہائیکورٹ نے نواز شریف سے ملاقات کی اجازت دی تھی، مریم نواز سے خاندان کے افراد کے علاوہ کسی کو ملنے کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔

دوسری طرف ڈاکٹر عدنان نے مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ  ٹوئٹر پر اپنے ٹویٹ میں کہا کہ میں نے مریم نواز سے میڈیکل کنسلٹیشن کے لئے ملاقات کرناتھی لیکن مجھے اس سے روک دیا گیا جو غیر انسانی رویہ ہے۔انہوں نے کہا کہ مریم نواز کو جیل میں انتہائی خراب اور قابل مذمت قید تنہائی میں رکھا ہوا ہے۔

علاوہ ازیں مریم نواز کے بھائی حسین نواز نے سوشل میڈیا پر اپنی ٹوئٹس میں کہا کہ جناح ہسپتال سے ڈاکٹرز کی ٹیم مریم نواز کے معائنے کیلئے جیل گئی لیکن اب تک فیملی کو کچھ نہیں بتایا گیا، ڈاکٹر عدنان بھی فیملی کے ہمراہ ملاقات کے لئے گئے لیکن انہیں بھی ملنے سے روک دیا گیا، اگرمریم نواز کی صحت کوکچھ ہوا تو وزیر اعلیٰ عثمان بزدار اور انتظامیہ کے تمام افسر اس کے ذمہ دار ہوں گے۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور