صرف 36 سال کی عمر میں 44بچوں کو جنم دینے والی لڑکی کی حیران کن کہانی

صرف 36 سال کی عمر میں 44بچوں کو جنم دینے والی لڑکی کی حیران کن کہانی
صرف 36 سال کی عمر میں 44بچوں کو جنم دینے والی لڑکی کی حیران کن کہانی

  



کمپالا(مانیٹرنگ ڈیسک) مشرقی افریقہ کے ملک یوگنڈا میں ایک خاتون نے 36سال کی عمر میں 44بچے پیدا کرکے ریکارڈ قائم کر ڈالا ہے۔ دی مرر کے مطابق اس خاتون کا نام مریم نباتانزی ہے جو یوگنڈا کے دارالحکومت کمپالا سے 50کلومیٹر دور ایک گاﺅں میں رہتی ہے۔ اس کی 12سال کی عمر میں شادی ہوئی اور اگلی 27سالہ شادی شدہ زندگی میں اس نے 44بچوں کو جنم دیا۔ بدقسمتی سے ان میں سے 6بچے پیدائش کے وقت یا کچھ عرصہ بعد انتقال کر گئے اور اب اس کے پاس 38زندہ و سلامت بچے موجود ہیں اور اب ڈاکٹروں نے اس کا آپریشن کرکے اس کے یوٹرس کو اندر سے کاٹ دیا ہے جس کے بعد اب وہ مزید بچے پیدا نہیں کر سکتی۔

رپورٹ کے مطابق مریم کے ہاں 6بار جڑواں، 4بار تین تین اور 5بار چار چار بچے پیدا ہوئے۔ ڈاکٹروں کا کہنا تھا کہ مریم کا رحم غیرفطری طور پر بڑے سائز کا ہونے اور بیک وقت افزائش نسل کے قابل ایک سے زائد بیضے پیدا کرنے کی وجہ سے اس کے ہاں زیادہ بچے پیدا ہوتے رہے۔ ڈاکٹروں ہی نے اسے مانع حمل ادویات استعمال کرنے سے منع کیے رکھا تھا کیونکہ وہ ایک ایسے طبی عارضے کا شکار تھی کہ مانع حمل ادویات اس کی صحت کے لیے خطرناک ہو سکتی تھیں۔ چنانچہ ڈاکٹروں کی اس ہدایت پر عمل کرتے کرتے وہ 44بچوں کی ماں بن گئی۔

جب اتنے زیادہ بچے پیدا ہوئے تو اس کے شوہر نے اسے خاندان کے لیے نحوست قرار دیتے ہوئے طلاق دے دی اور اب وہ اکیلی ان 38بچوں کو پال رہی ہے۔ مریم کا کہنا ہے کہ ”میں نے تمام عمر آنسو ہی دیکھے ہیں۔ میرے شوہر نے مجھے بہت تکلیفیں دیں۔ میری ساری زندگی بچے پالتے اور ان کے لیے کماتے گزر گئی لیکن اس کے باوجود میرے شوہر نے مجھے چھوڑ دیا۔“ رپورٹ کے مطابق مریم ایک محنتی خاتون ہے جو ہیئر ڈریسنگ، ایونٹ ڈیکوریٹنگ اور جڑی بوٹیاں جنگل سے لا کر فروخت کرنے سے لے کر کچرے سے دھات اور پلاسٹک کی اشیاءچن کر فروخت کرنے تک ہر طرح کے کام کرتی ہے تاکہ اپنے اتنے زیادہ بچوں کا پیٹ پال سکے۔ وہ کڑی محنت کرکے اپنے بچوں کو تعلیم بھی دلوا رہی ہے۔ اس کے کئی بچے گریجوایشن کر رہے ہیں۔ اس کے سب سے بڑے بچے کا نام آئیوان کیبوکا ہے جو اس وقت 23سال کا ہے۔ اس نے سکینڈری سکول تک تعلیم حاصل کی اور آگے فیس کا انتظام نہ ہونے کی وجہ سے اسے تعلیم ادھوری چھوڑنی پڑی۔

مزید : ڈیلی بائیٹس