وہ ہمسفر تھا مگر اُس سے ہم نوائی نہ تھی | نصیر ترابی |

وہ ہمسفر تھا مگر اُس سے ہم نوائی نہ تھی | نصیر ترابی |
وہ ہمسفر تھا مگر اُس سے ہم نوائی نہ تھی | نصیر ترابی |

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

وہ ہمسفر تھا مگر اُس سے ہم نوائی نہ تھی
کہ دھوپ چھاؤں کا عالم رہا جدائی نہ تھی


محبتوں کا سفر اس طرح بھی گزرا تھا
شکستہ دل تھے مسافر ، شکستہ پائی نہ تھی

 
عداوتیں تھیں ، تغافل تھا، رنجشیں تھیں مگر
بچھڑنے والے میں سب کچھ تھا ، بے وفائی نہ تھی


بچھڑتے وقت ان آنکھوں میں تھی ہماری غزل
غزل بھی وہ جو کسی کو ابھی سنائی نہ تھی


عجیب ہوتی ہے راہِ سخن بھی دیکھ نصیرؔ
وہاں بھی آ گئے آخر  جہاں رسائی نہ تھی

شاعر:نصیر ترابی

Wo   Hamsafar   Tha   Magar   Uss   Say   Ham   Nawaai   Na   Thi

Keh   Dhoop   Chhaaun   Ka   Aalam   Raha    Judaai   Na   Thi

 Muhabbaton   Ka   Safar   Iss   Tarah   Bhi   Guzra   Tha

Shakista   Dil   Thay    Musaafir   ,   Shakista   Paai   Na   Thi

 Adaawten   Then  ,   Taghaaful   Tha   ,   Ranjashen   Then   Magar

Bicharrnay   Waalay   Men   Sab   Kuchh    Tha   ,   Be  Wafaai   Na   Thi

 Bichharrtay   Waqt   Un   Aankhon   Men   Thi   Hamaari   Ghazal

Ghazal   Bhi   Wo   Jo   Kisi   Ko   Abhi   Sunaai   Na   Thi

 Ajeeb   Hoti   Hay   Raah-e-Sukhan   Bhi   Daikh   NASEER

Wahan   Bhi   Aa   Gaey   Aakhir     Jahan   Rasaai   Na   Thi

 Poet: Naseer   Turabi