جہاں وہم و گماں ہو جائے گا کیا | نون میم دانش |

جہاں وہم و گماں ہو جائے گا کیا | نون میم دانش |
جہاں وہم و گماں ہو جائے گا کیا | نون میم دانش |

  

جہاں وہم و گماں ہو جائے گا کیا

یہاں سب کچھ دُھواں ہو جائے گا کیا

ستارے دھول اور مٹی بنیں گے

سمندر آسماں ہو جائے گا کیا

تمہارا عشق تو لا صلی ہے

یہ غم بھی رائگاں ہو جائے گا کیا

یوں سر پر ہاتھ رکھ کر چل رہے ہو

تو اس سے سائباں ہو جائے گا کیا

بہت کچھ ہے یہاں کہنے کے لائق

مگر سب کچھ بیاں ہو جائے گا کیا

مجھے مرنا تو ہے اک روز دانش

مگر یہ ناگہاں ہو جائے گا کیا

شاعر: نون میم دانش

(شعری مجموعہ:بچے، تتلی، پھول؛سالِ اشاعت،1997 )

Jahan   Wehm -o-Gumaan   Ho   Jaaey   Ga   Kaya

Yahan   Sab   Kuchh   Dhuwaan   Ho   Jaaey   Ga   Kaya

 Sitaaray   Dhool   Aor   Matti   Banen   Gay

Samnadar   Aasmaan   Ho   Jaaey   Ga   Kaya

 Tumhaara   Eshq   To   La    Haasli   Hay

Yeh   Gham   Bhi   Raigaan   Ho   Jaaey   Ga   Kaya

 Yun   Sar   Par    Haath   Rakh   Kar    Chall     Rahay   Ho

To   Uss   Say   Saaibaan   Ho   Jaaey   Ga   Kaya

 Bahut    Kuchh    Hay   Yahan    Kehnay    K   Laaiq

Magar    Sab    Kuchh    Bayaan   Ho   Jaaey   Ga   Kaya

 Mujhay    Marna   To   Hay   Ik   Roz   DANISH

Magar   Yeh   Nagahaan   Ho   Jaaey   Ga   Kaya

 Poet: Noom   Meem   Danish

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -