دیکھے ہوئے کسی کو بہت دن گزر گئے | نون میم دانش |

دیکھے ہوئے کسی کو بہت دن گزر گئے | نون میم دانش |
دیکھے ہوئے کسی کو بہت دن گزر گئے | نون میم دانش |

  

دیکھے ہوئے کسی کو بہت دن گزر گئے

اس دل کی بے بسی کو بہت دن گزر گئے

ہر شب چھتوں پہ چاند اُترتا تو ہے مگر

اس گھر میں چاندنی کو بہت دن گزر گئے

کوئی جواز ڈھونڈ غمِ ناشناس کا

بے وجہ بے کلی کو بہت دن گزر گئے

مدت ہوئی ہے ٹوٹ کے رویا نہیں ہوں میں

اس چین کی گھڑی کو بہت دن گزر گئے

وہ جاگتی حویلی بھی ویران ہو گئی

اس نقرئی ہنسی کو بہت دن گزر گئے

جو اعتبارِ زخمِ ہنر نے عطا کیا

دانش وہ شاعری کو بہت دن گزر گئے

شاعر: نون میم دانش

(شعری مجموعہ:بچے، تتلی، پھول؛سالِ اشاعت،1997 )

Daikhay   Huay   Kisi   Ko   Bahut   Din   Guzar   Gaey

Iss   Dil   Ki   Be Basi   Ko   Bahut   Din   Guzar   Gaey

 Har   Shab   Chhaton   Pe   Chaand   Utarta   To   Hay   Magar

Iss   Ghar   Men   Chaandni   Ko   Bahut   Din   Guzar   Gaey

 Koi   Jawaaz   Dhoond   Gham-e-Na   Shanaas   Ka

Be  Wajah   Be   Kali    Ko   Bahut   Din   Guzar   Gaey

 Muddat   Hui   Hay  Toot   K   Roya   Nahen   Hun   Main

Iss   Chain   Ki   Gharri   Ko   Bahut   Din   Guzar   Gaey

 Wo   Jaagti   Hawaili   Bhi   Veeraan   Ho   Gai

Iss   Naqrai   Hansi   Ko   Bahut   Din   Guzar   Gaey

Jo   Aitbaar -e-Zakhm -e-Hunar   Nay   Ataa   Kiya

DANISH   Wo   Shaairi   Ko   Bahut   Din   Guzar   Gaey

Poet: Noon   Meem   Danish

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -