شوق کو عازِم سفر رکھیے | نکہت افتخار |

شوق کو عازِم سفر رکھیے | نکہت افتخار |
شوق کو عازِم سفر رکھیے | نکہت افتخار |

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

شوق کو عازِم سفر رکھیے
بے خبر بن کے سب خبر رکھیے


چاہے نظریں ہوں آسمانوں پر
پاؤں لیکن زمین پر رکھیے


مجھ کو دل میں اگر بسانا ہے
ایک صحرا کو اپنے گھر رکھیے


کوئی نشہ ہو ٹوٹ جاتا ہے
کب تلک خود کو بے خبر رکھیے


بات ہے کیا یہ کون پرکھے گا
آپ لہجے کو پر اثر رکھیے


جانے کس وقت کوچ کرنا ہو
اپنا سامان مختصر رکھیے


دل کو خود دل سے راہ  ہوتی ہے
کس کو کوئی نامہ بر رکھیے


ایک ٹک مجھ کو دیکھے جاتی ہیں
اپنی نظروں پہ کچھ نظر رکھیے


شاعرہ: نکہت افتخار

Shaoq   Ko   Aazam-e-Safar   Rakhiay

Be   Khabar   Ban   K   Sab   Kahabar   Rakhiay

 Chaahay  Nazren   Hon   Aasmaanon   Par

Paaon   Lekin   Zameen   Par   Rakhiay

 Mujh   Ko   Dil   Men   Agar   Basaana   Hay

Aik   Sehra    Ko   Apnay   Ghar   Rakhiay

 Koi   Nashha   Ho   Toot   Jaata   Hay

Kab   Talak   Khud   Ko   Bekhabar   Rakhiay

 Baat   Hay   Kaya   Yeh   Kon   Parkhay  Ga

Aap   Lehjay   Ko   Pur   Asar   Rakhiay

 Jaanay   Kiss   Waqt   Kooch   Karna   Ho

Apna   Saamaan   Mukhtasar   Rakhiay

 Dil    Ko   Khud   Dil   Say   Raah   Hoti   Hay

Kiss   Ko   Koi   Naama   Bar   Rakhiay

 Aik   Tukk   Mujh   Ko   Dekhay   Jaati   Hay

Apni   Nazron   Pe   Kuchh   Nazar   Rakhiay

 

Poet: Nikhat   Ifikhar