حکومت کا مریم نواز سے متعلق الیکشن کمیشن کے فیصلے کو چیلنج کرنے کا فیصلہ

حکومت کا مریم نواز سے متعلق الیکشن کمیشن کے فیصلے کو چیلنج کرنے کا فیصلہ
حکومت کا مریم نواز سے متعلق الیکشن کمیشن کے فیصلے کو چیلنج کرنے کا فیصلہ

  


اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)مشیر اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے کہاہے کہ حکومت نے مریم نواز سے متعلق الیکشن کمیشن کے فیصلے کے خلاف اپیل دائر کرنے کا فیصلہ کیاہے،اس فیصلہ میں لکھا گیاہے کہ یہ ایک نان فنکشنل عہدہ ہے ، ہماری رائے میں سپریم کورٹ کے اس فیصلے کی خلاف ورزی ہے جس کے تحت کوئی بھی مجرم شخص کسی عہدے پر فائز نہیں ہوسکتا ۔

کابینہ کے اجلاس کے بعد پریس کانفرنس کرتے ہوئے فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ وزیر اعظم کشمیر کے سفیر بن کر امریکہ جارہے ہیں اور وہ امریکہ جاکر مختلف شخصیات سے ملاقاتیں کریں گے ۔وزیر اعظم جنرل اسمبلی میں مسئلہ کشمیر بھرپور طریقے سے اجاگر کریں گے ۔انہوں نے کہا کہ وزیراعظم میڈیاکی آزادی پر یقین رکھتے ہیں، ذمہ دار میڈیا کا کردار ریاست کیلئے لازم وملزوم ہے۔میڈیا کے احتسابی عمل کا آغاز کیا جارہاہے، کابینہ نے فیصلہ کیاہے کہ خصوصی میڈیا ٹربیونل قائم کئے جائیں گے ۔ میڈیا ٹربیونل میں جو بھی جائے گا ، اس کا فیصلہ 90دن میں کیاجائے گا، خصوصی میڈیا ٹربیونل کی سرپرستی اعلیٰ عدلیہ کرے گی ۔ انہوں نے کا کہ میڈیا کو ریاست کا چوتھا ستون مان لیاگیاہے اور میڈیا ٹربیونلز کا مقصد میڈیا سے متعلق شکایات کا فوری ازالہ کرنا ہے ۔

فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان نے مریم نواز کے خلاف پٹیشن کو مسترد کیاہے ،حکومت نے اس فیصلے کے خلاف اپیل دائر کرنے کا فیصلہ کیاہے ۔ اس فیصلہ میں لکھا گیاہے کہ یہ ایک نان فنکشنل عہدہ ہے جوکہ ن لیگ کی جانب سے الیکشن کمیشن کو بتایا گیاہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہماری رائے میں الیکشن کمیشن کا فیصلہ سپریم کورٹ کے اس فیصلے کی خلاف ورزی ہے جس کے تحت کوئی بھی مجرم شخص کسی عہدے پر فائز نہیں ہوسکتا ۔ ان کا کہنا تھا کہ اس فیصلے سے دوچیزیں سامنے آئی ہیں ، ایک یہ کہ مریم نواز سزا یافتہ ہیں اوردوسرا وہ جنرل سیکرٹری یا کسی اور عہدے پر فائز نہیں ہوسکتیں۔ انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے جلد اپیل سامنے آجائیگی ، وزیر اعظم عوامی سہولیات سے متعلق کابینہ کے مختلف افراد سے رائے لیتے ہیں ، اس سلسلے میں وفاقی وزیر صحت نے اپنی آراءبیان کی ہیں۔

مزید : اہم خبریں /قومی


loading...