اسلام آباد سے لاپتا ہونے والی 14 سالہ طالبہ سوات میں دوست کے ساتھ مل گئی، انصار عباسی کا ساتویں کلاس کی بچی کے ’Consent‘ سے گھر سے بھاگنے پر اظہار تشویش

اسلام آباد سے لاپتا ہونے والی 14 سالہ طالبہ سوات میں دوست کے ساتھ مل گئی، ...
اسلام آباد سے لاپتا ہونے والی 14 سالہ طالبہ سوات میں دوست کے ساتھ مل گئی، انصار عباسی کا ساتویں کلاس کی بچی کے ’Consent‘ سے گھر سے بھاگنے پر اظہار تشویش

  


اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کی پولیس نے 2 روز قبل سیکٹر جی 8 سے لاپتا ہونے والی ساتویں کلاس کی طالبہ کو سوات سے پکڑ لیا ہے۔

پولیس کے مطابق 14 سالہ ساتویں جماعت کی طالبہ کمشکا خالد 2 روز قبل اسلام آباد کے سیکٹر جی 8 سے شام 7 بجے لاپتا ہوئی تھی ۔ والدین نے رات ساڑھے 10 بجے کے قریب پولیس سے رابطہ کیا جس کے بعد اس کی تلاش شروع کردی گئی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ کمشکا خالد اپنے دوست کے ساتھ گھر سے گئی تھی، دونوں پہلے مری گئے جس کے بعد سوات کی سیر کر رہے تھے اور اسی دوران پکڑے گئے۔ پولیس نے یہ بھی واضح کیا ہے کہ بچی کی گمشدگی میں اغوا یا زبردستی کا کوئی عنصر شامل نہیں تھا بلکہ وہ اپنی مرضی سے گئی تھی۔

ساتویں جماعت کی طالبہ کے اپنے مرضی سے گھر سے جانے پر سینئر صحافیوں نے انتہائی تشویش کا اظہار کیا ہے۔سینئر صحافی احمد نورانی نے ٹوئٹر پر لکھا ’ 2 روز قبل اسلام آباد کے سیکٹر G-8 سے لاپتا ہونے والی لڑکی کو اسلام آباد پولیس نے سوات سے بازیاب کرالیا ہے، طالبہ اپنی مرضی سے اپنے کلاس فیلو کے ساتھ وہاں گئی تھی۔‘

سینئر صحافی انصار عباسی نے بھی 14 سالہ بچی کے اپنے ’Consent‘ سے جانے پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ انہوں نے لکھا ’ جب مخلوط نظام تعلیم، مغربی ثقافت کا فروغ اور لڑکوں لڑکیوں کی دوستیوں کو بڑھاوا دیں گے اور میڈیا بھی بے شرمی اور بے حیائی کو پروموٹ کرے گا تو یہی کچھ ہو گا۔ ساتویں کلاس کی بچی اور ساتویں کلاس کے بچے کا consent سے گھر سے بھاگنا،توبہ، دیکھتے ہیں اب میڈیا بولے گا تو کیا؟‘

مزید : علاقائی /اسلام آباد


loading...