شنگھائی تعاون تنظیم کے فورم پر دوطرفہ معاملات کو نہیں اٹھایا جا سکتا: شاہ محمود قریشی 

شنگھائی تعاون تنظیم کے فورم پر دوطرفہ معاملات کو نہیں اٹھایا جا سکتا: شاہ ...

  

  اسلام آباد (این این آئی)وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے شنگھائی تعاون تنظیم کے این ایس ایز اجلاس میں بھارت کی جانب سے اٹھائے جانے والے بلاجواز اعتراض پر کہا ہے کہ شنگھائی تعاون تنظیم کے فورم پر دو طرفہ معاملات کو نہیں اٹھایا جا سکتا۔ بدھ کوانہوں نے کہاکہ شنگھائی تعاون تنظیم کی وزرائے خارجہ کونسل کا اجلاس کچھ دن قبل ماسکو میں ہوا جس میں مجھے بھی شرکت کا موقع ملا۔ وزیر خارجہ نے کہاکہ شنگھائی تعاون تنظیم میں یہ اصول طے ہے کہ اس فورم پر دو طرفہ معاملات کو نہیں اٹھایا جا سکتا،دو طرفہ معاملات کیلئے سائیڈ لائن ملاقاتیں طے ہوتی ہیں،ہم نے ایس سی او کے قواعد کی پاسداری کی،بھارت نے اس قاعدے کی خلاف ورزی کی اور دو طرفہ معاملے پر اعتراض اٹھایا۔ انہوں نے کہاکہ شنگھائی تعاون تنظیم کے این ایس ایز کا اجلاس تھا جس میں بھارت نے پاکستان کے نقشے پر اعتراض اٹھایا جسے مسترد کر دیا گیا چنانچہ اسے ندامت اٹھانا پڑی،مقبوضہ کشمیر عالمی سطح پر تسلیم شدہ متنازعہ علاقہ ہے،اقوام متحدہ کی اس ضمن میں قراردادیں موجودہیں۔ انہوں نے کہاکہ روس نے اجلاس کے میزبان کی حیثیت سے بھی بھارت کے نقطہ نظرکو تسلیم نہیں کیا،بھارت کے سیکورٹی ایڈوائزر نے اجلاس سے واک آؤٹ کی دھمکی دی اور پھر واک آؤٹ کیا۔ انہوں نے کہاکہ بھارت اپنے روئے سے ہر فورم پر اپنی ساکھ کھو رہا ہے،لداخ کے حوالے سے چین نے بھارت کو بارہا گفتگو کے ذریعے معاملات کو سلجھانے کی پیشکش کی لیکن بھارت نے وہاں بھی جارحیت کا راستہ اختیار کیا اور بھر اسے سبکی کا سامنا کرنا پڑا،بھارت کی جارحانہ حکمت عملی کو چین نے تسلیم نہیں کیا، چین نے بھارت کو جارحیت پر جواب دیا۔ وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ یورپی یونین انسانی حقوق کی داعی ہونے کے ناطے بھارت پر زور دے کہ وہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں مظالم کا سلسلہ فوری طور پر بند کرے اور بھارتی جیلوں میں مقید بے گناہ کشمیریوں کو فی الفور رہا کرے،پاکستان اور یورپی یونین کے مابین مختلف شعبوں میں تعاون اور باہمی روابط کا فروغ خوش آئند ہے،پاکستان نے محدود وسائل کے باوجود، کرونا وائرس کے پھیلا کو روکنے کیلئے موثر اقدامات کئے، پاکستان کی سمارٹ لاک ڈاؤن پالیسی کو دنیا بھر میں سراہا جا رہا ہے۔بدھ کو وزارت خارجہ میں وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی سے پاکستان میں یورپی یونین کی سفیر اینڈرولا کامینارا نے  ملاقات کی۔ملاقات میں دو طرفہ تعلقات، کرونا عالمی وبائی صورتحال سمیت باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔وزیر خارجہ  شاہ محمود قریشی نے کرونا وبائی چیلنج سے نمٹنے کے لئے یورپی یونین کی طرف سے پاکستان کی بروقت معاونت پر یورپی یونین کا شکریہ ادا کیااور کرونا وبا کے معاشی مضمرات سے نمٹنے اور ترقی پذیر ممالک کو قرضوں کی ادائیگی پر سہولت فراہم کرنے کے حوالے سے وزیر اعظم عمران خان کی تجویز کی حمایت پر یورپی یونین کے کردار کو سراہا۔ملاقات کے دوران  وزیر خارجہ نے افغان امن عمل، میں پاکستان کی مصالحانہ کوششوں، بین الافغان مذاکرات اور اس سلسلے میں اب تک ہونیوالی پیش رفت کا بھی تذکرہ کیا۔فریقین نے  مختلف شعبہ جات میں دو طرفہ تعاون کے فروغ کے حوالے سے مشاورت جاری رکھنے پر اتفاق کیا۔

شاہ محمود قریشی

مزید :

صفحہ اول -