ملکی تاریخ میں پہلی مرتبہ گندم کی فصل کیلئے کیلنڈر تیار کرنے کا فیصلہ

      ملکی تاریخ میں پہلی مرتبہ گندم کی فصل کیلئے کیلنڈر تیار کرنے کا فیصلہ

  

ملتان (سپیشل رپورٹر) سیکرٹری زراعت جنوبی پنجاب ثاقب علی عطیل نے کہا ہے کہ ملکی تاریخ میں پہلی دفعہ گندم کی فصل کیلئے کیلنڈر تیار کیا جارہا ہے جس میں فصل سے بہتر نتائج کے حصول کیلئے پورا سال جاری سرگرمیوں کی تفصیل درج ہوگی۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جنوبی پنجاب میں گندم کی آئندہ فصل کو زرد کنگی کے ممکنہ حملہ سے محفوظ رکھنے کیلئے اپنے کمیٹی روم میں (بقیہ نمبر34صفحہ 10پر)

 منعقدہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ آئندہ جنوبی پنجاب میں زیادہ پیداواری صلاحیت کی حامل اور کنگی کے خلاف قوت مدافعت رکھنے والی اقسام کی کاشت کو ہی فروغ دیا جائے گا۔ ریجنل ایگریکلچر ریسرچ انسٹیٹیوٹ کی زرد کنگی کے خلاف زیادہ قوت مدافعت کی حامل نئی قسم غازی 19- کا 9 ہزار کلو گرام پری بیسک بیج پنجاب سیڈ کارپوریشن کو زیادہ مقدار میں تیار کرنے کیلئے فراہم کیا جارہا ہے۔ اس موقع پر انہوں نے ہدایت کی کہ اگر کوئی زہر کسی فصل کیلئے رجسٹرڈ نہیں ہے اور اس کے لیبل پر بھی اس فصل پر استعمال بارے ہدایات درج نہیں ہیں تو ایسی زہروں کا سپرے فصلوں پر استعمال کرنے کی ہرگز اجازت نہیں دی جائے گی کیونکہ یہ زہریں فصل میں اپنے بقایا اثر (MRL) کی وجہ سے صحت کیلئے نقصان دہ ہوتی ہیں اور یہ اجناس برآمدات کیلئے بھی موزوں نہیں رہتیں۔ انہوں نے ہدایت کی کہ آئندہ گندم کی کاشت سے برداشت تک نمی اور درجہ حرات کا ڈیٹا تیار کیا جائے کیونکہ کنگی کا حملہ نمی اور درجہ حررت سے براہ راست منسلک ہے۔ اس موقع پر انہوں نے ہدایت دیتے ہوئے کہا کہ گندم کی فصل کیلئے یکم فروری سے 20 مارچ تک زرد کنگی کیلئے پھپھوندی کش زہروں کی دستیابی یقینی بنائی جائے۔ اس دوران اگر مارکیٹ میں پھپھوندکش زہروں کی کمی دیکھی گئی تو متعلقہ شعبہ کے افسران کو ذمہ دار ٹھہرایا جائے گا۔ لہٰذا ابھی سے اس کی پلاننگ اور دستیابی کے انتظام و بندوبست کیلئے متعلقہ امپورٹرز اور ڈسٹری بیوٹرز سے مذاکرات کریں۔ زردکنگی کے خلاف صرف سفارش کردہ مخصوص پھپھوندکش زہریں ہی سپرے کرائی جائیں گی اور غیر ضروری پھپھوند کش زہروں کے استعمال کی ہرگز اجازت نہیں دی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ گندم کی فصل کیلئے یہ عرصہ بڑی اہمیت کا حامل ہے جس میں فیلڈ سٹاف کو زیادہ متحرک اور ہوشیار رہنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے ہدایت کی کہ اکتوبر کے پہلے ہفتہ میں شعبہ زراعت توسیع و پیسٹ وارننگ کے سٹاف کو زرد کنگی کی پہچان اور تدارک بارے مکمل تربیت دی جائے۔ جبکہ سیکرٹری زراعت جنوبی پنجاب ثاقب علی عطیل نے کہا ہے کہ شعبہ کراپ رپورٹنگ سروس کو پرفارمنس میں بہتری لانے کی ضرورت ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے جنوبی پنجاب میں خریف کی فصلوں کے زیر کاشت رقبہ اور پیداوار کے تخمینہ بارے جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے ہدایت کی کہ  فصلوں کا ڈیٹا اکٹھا کرنے کے نظام کو سائنسی بنیادوں پر استوار کریں کیونکہ زراعت کی پوری پلاننگ کراپ رپورٹنگ کے اعداد و شمار پر منحصر ہے۔ اگر اعداد و شمار ہی غلط ہوں تو منصوبہ بندی اور نتائج میں ناکامی کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جنوبی پنجاب کی خریف کی پانچ اہم فصلوں کپاس، دھان، کماد، مکئی، اور آم کا گزشتہ دس سالوں کی کاشت اور پیداوار کا صحیح تخمینہ پیش کیا جائے تاکہ 2010-11 سے 2019-20 تک ان پانچ فصلوں کے کاشتہ رقبے اور پیداوار میں کمی و بیشی کا موازنہ کیا جاسکے۔انہوں نے ہدایت دیتے ہوئے کہا کہ ڈویژن کی سطح پر اعداد و شمار تیار کرکے پیش کیے جائیں تاکہ تینوں ڈویژنز میں ان فصلوں کے رجحانات کے بارے میں معلومات حاصل ہوسکیں۔ انہوں نے ہدایت کی کہ ہر لحاظ سے مکمل اعداد و شمار گراف کی صورت میں دکھائے جائیں تاکہ دیکھنے، سمجھنے اور پیش کرنے میں آسانی ہو۔

کیلنڈر

مزید :

ملتان صفحہ آخر -