ہم نے مانا اس زمانے میں ہنسی بھی جرم ہے​ | اقبال عظیم |

ہم نے مانا اس زمانے میں ہنسی بھی جرم ہے​ | اقبال عظیم |
ہم نے مانا اس زمانے میں ہنسی بھی جرم ہے​ | اقبال عظیم |

  

ہم نے مانا اس زمانے میں ہنسی بھی جرم ہے​

لیکن اس ماحول میں افسردگی بھی جرم ہے​

دشمنی تو خیر ہر صورت میں ہوتی ہے گناہ​

اک معین حد سے آگے دوستی بھی جرم ہے​

ہم وفائیں کر کے رکھتے ہیں وفاوُں کی امید​

دوستی میں اس قدر سوداگری بھی جرم ہے​

اس سے پہلے زندگی میں ایسی پابندی نہ تھی​

اب تو جیسے خود وجودِ زندگی بھی جرم ہے​

آدمی اس زندگی سے بچ کے جائے بھی کہاں​

مے کشی بھی جرم ہے اور خودکشی بھی جرم ہے​

سادگی میں جان دے بیٹھے ہزاروں کوہ کن​

آدمی سوچے تو اتنی سادگی بھی جرم ہے​

کتنی دیواریں کھڑی ہیں ہر قدم پر راہ میں

اور ستم یہ ہے کہ شوریدہ سری بھی جرم ہے​

ایک ساغر کے لئے جو بیچ دے اپنا ضمیر​

ایسے رندوں کے لئے تشنہ لبی بھی جرم ہے​

اپنی بے نوری کا ہم اقبال ماتم کیوں کریں​

آج کے حالات میں دیدہ وری بھی جرم ہے​

شاعر: اقبال عظیم

(شعری مجموعہ: مضراب و رباب)

Ham   Nay   Maana   Iss   Zamaanay   Men   Hansi   Bhi    Jurm   Hay

Lekin   Iss   Mahol   Men   Afsurdagi    Bhi    Jurm   Hay

Dushmani   To    Khair    Har     Soorat    Men    Hoti    Hay   Gunaah

Ik    Muayyan    Had    Say    Aagay    Dosti    Bhi    Jurm   Hay

Ham    Wafaaen    Kar    K    Rakhtay   Hen   Wafaaon    Ki    Umeed

Dosti    Men    Iss    Qadar    Sodagari   Bhi    Jurm   Hay

Iss    Say     Pehlay    Zindagi    Men    Itni     Pabandi    Na    Thi

Ab    To     Jaisay    Wajood -e- Zindagi  Bhi    Jurm   Hay

Aadmi     Iss    Zindagi   Say    Bach    K    Jaaey    Bhi    Kahan

Maykashi     Bhi     Jurm    Hay,   Aor     Khud    Kashi  Bhi    Jurm   Hay

Saadgi    Men    Jaan    Day     Baithay     Hazaaron    Kohkan

Aadmi     Sochay    To    Itni    Saadgi  Bhi    Jurm   Hay

Kitni    Dewaaren    Kharri    Hen    Har    Qadam    Par    Raah    Men

Aor    Sitam    Yeh    Hay     Keh    Shoreeda    Sari    Bhi    Jurm    Hay

Aik    Saghar    K    Liay     Jo    Baich    Den    Apna    Zameer

Aisay    Rindon    K    Liay   Tashna    Labi    Bhi    Jurm    Hay

Apni    Be    Noori    Ka    Ham   IQBAL    Maatam    Kiun   Karen

Aaj    K    Halaat    Men    Deeda   Wari  Bhi    Jurm   Hay

Poet: Iqbal Azeem

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -