زہر دے دے نہ کوئی گھول کے پیمانے میں  | اقبال عظیم |

زہر دے دے نہ کوئی گھول کے پیمانے میں  | اقبال عظیم |
زہر دے دے نہ کوئی گھول کے پیمانے میں  | اقبال عظیم |

  

زہر دے دے نہ کوئی گھول کے پیمانے میں 

اب تو جی ڈرتا ہے خود اپنے ہی میخانے میں 

سارا ماضی مری آنکھوں میں سمٹ آیا ہے 

میں نے کچھ شہر بسا رکھے  ہیں ویرانے میں 

بے سبب کیسے بدل سکتا ہے رندوں کا مزاج 

کچھ غلط لوگ چلے آئے ہیں میخانے میں 

جام جم سے نگہِ توبہ شکن تک ساقی 

پوری روداد ہے ٹوٹے ہوئے پیمانے میں 

پیاس کانٹوں کی بجھاتا ہے لہو سے اپنے 

کتنی بالغ نظری ہے مری دیوانے میں 

مجھ پہ تنقید بھی ہوتی ہے تو القاب کے ساتھ 

کم سے کم اتنا سلیقہ تو ہے بیگانے میں 

اس کو کیا کہتے ہیں اقبالؔ کسی سے پوچھو 

دل نہ اب شہر میں لگتا ہے نہ ویرانے میں 

شاعر: اقبال عظیم

(شعری مجموعہ: مضراب و رباب)

Zehr   Day   Day   Na   Koi    Ghol   K    Paimaanay   Men

Ab   To   Ji   Darta   Hay    Khud   Apnay   Hi   Maykhaanay   Men

Saara    Maazi    Miri    Aankhon   Men    Simat    Aaya   Hay

Main   Nay   Kuch   Shehr    Basa   Rakhay   Hen   Weraanay   Men

Be   Sabab   Kaisay   Badal   Sakta   Hay   Rindon    Ka   Mizaaj

Kuck   Ghalat   Log    Chalay    Aaey    Hen    Maykhaanay   Men

Jaam-e- Jam    Say    Nigah -e- Toba    Shikan    Tak   Saaqi

Poori    Roodaad    Hay    Tootay    Huay    Paimaanay    Men

Payaas    Kaanton    Ki     Bujhaata    Hay    Lahu    Say   Apnay

Kitni    Baaligh    Nazari    Hay   Tiray    Dewaanay   Men

Mujh    Pe    Tanqeed    Bhi    Hoti     Hay    To    Alqaab    K   Saath

Kam     Say    Kam    Itna    Saleeqa    To    Hay    Begaanay   Men

Iss    Ko    Kaya   Kehtay    Hen    IQBAL    Kisi    Say   Poochho

Dil    Na    Ab    Shehr    Men    Lagta    Hay    Na     Weraanay    Men

Poet: Iqbal    Zaeem

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -