کب تک اے ابرِ کرم ترسائے گا | الطاف حسین حالی|

کب تک اے ابرِ کرم ترسائے گا | الطاف حسین حالی|
کب تک اے ابرِ کرم ترسائے گا | الطاف حسین حالی|

  

کب تک اے ابرِ کرم ترسائے گا

مینہ بھی رحمت کا کبھی برسائے گا

پھل کچھ اے نخلِ وفا ! تجھ میں نہیں

جو لگائے گا تجھے، پچھتائے گا

دوست کا آیا ہی سمجھو اب پیام !

آج اگر آیا نہیں کل آئے گا

ذوق سب جاتے رہے جُز ذوقِ درد

اِک یہ لپکا دیکھیے کب جائے گا

وعظ آتا ہے تو آنے دو اُسے

پر مزا آنے کا یہاں کیا پائے گا

آئے گا اور ہم کو شرمائے گا مفت

اور خود شرمندہ ہوکر جائے گا

عیب سے خالی، نہ واعظ ہے نہ ہم

ہم پہ منہ آئے گا، مُنہ کی کھائے گا

دِل کے تیور ہی کہے دیتے تھے صاف

رنگ یہ دِیوانہ اِک دِن لائے گا

باغ و صحرا میں رہے جو تنگ دِل

جی قفس میں اُس کا کیا گبھرائے گا

رنگ گردوں کا ہے کچھ بدلا ہُوا

شعبدہ تازہ کوئی دِکھلائے گا

ابر و برق آئے ہیں دونوں ساتھ ساتھ

دیکھیے برسے گا یا برسائے گا

مشکلوں کی جس کو ہے حالی خبر

مُشکلیں آساں وہی فرمائے گا

شاعر:  الطاف حسین حالی

(دیوانِ حالی: مرتبہ؛ رشید حسن خان،سالِ اشاعت،1987)

Kab   Tak    Ay    Abr-e-Karam     Tarsaaey    Ga

Meenh    Bhi    Rehmat    Ka    Kabhi    Barsaaey   Ga

Phal   Kuch   Ay    Nakhl-e- Wafa    Tujh    Men   Nahen

Jo    Lagaaey    Ga    Pachhtaaey    Ga

Dost    Ka    Aaya    Hi    Samjho   Kuch    Payaam

Aaj     Agar     Aaya     Nahen    Kall    Aaey    Ga

Zaoq    Sab    Jaatay    Rahay    Juzz    Zaoq -e- Dard

Ik    Yeh    Lapka    Dekhiay    Kab    Jaaey    Ga

Waaiz    Aata    Hay    To    Aanay    Do    Usay

Par    Maza    Aanay    Ka     Yahaan    Kaya    Paaey   Ga

Aaey    Ga    Aor    Ham    Ko    Sharmaaey    Ga   Muft

Aor     Khud    Sharminda    Ho    Kar    Jaaey    Ga

Aib    Say    Khaali    Na Waaiz     Hay   ,   Na    Ham

Ham    Pe     Munh     Aaey    Ga     Munh    Ki   Khaaey Ga

Dil    K    Taiwar    Hi    Kahay    Detay   Thay   Saaf

Rang    Yeh    Dewaana    Ik     Din     Laaey    Ga

Baagh -o - Sehra    Men    Rahay    Jo    Tang   Dil

Ji    Qafas    Men    Uss    Ka    Kaya     Ghabraaey   Ga

Rang    Gardoon    Ka    Hay    Kuchh    Badla    Hua

Shobda    Taaza    Koi    Dikhlaaey    Ga

Abr -o- Barq      Aaey     Hen     Dono    Saath    Saath

Daikhiay     Barsay    Ga    Ya     Barsaaey    Ga

Mushkalon     Ki    Jiss    Ko    Hay    HALI     Khabar

Mushkalen     Asaaan    Wahi     Farmaaey    Ga

Poet: Altaf    Hussain    Hali

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -