رنج اور رنج بھی تنہائی کا  | الطاف حسین حالی|

رنج اور رنج بھی تنہائی کا  | الطاف حسین حالی|
رنج اور رنج بھی تنہائی کا  | الطاف حسین حالی|

  

رنج اور رنج بھی تنہائی کا 

وقت پہنچا مری رسوائی کا 

عمر شاید نہ کرے آج وفا 

کاٹنا ہے شب تنہائی کا 

تم نے کیوں وصل میں پہلو بدلا 

کس کو دعویٰ ہے شکیبائی کا 

ایک دن راہ پہ جا پہنچے ہم 

شوق تھا بادیہ پیمائی کا 

اس سے نادان ہی بن کر ملیے 

کچھ اجارہ نہیں دانائی کا 

سات پردوں میں نہیں ٹھہرتی آنکھ 

حوصلہ کیا ہے تماشائی کا 

درمیاں پائے نظر ہے جب تک 

ہم کو دعویٰ نہیں بینائی کا 

کچھ تو ہے قدر تماشائی کی 

ہے جو یہ شوق خود آرائی کا 

اس کو چھوڑا تو ہے لیکن اے دل 

مجھ کو ڈر ہے تری خود رائی کا 

بزم دشمن میں نہ جی سے اترا 

پوچھنا کیا تری زیبائی کا 

یہی انجام تھا اے فصل خزاں 

گل و بلبل کی شناسائی کا 

مدد اے جذبۂ توفیق کہ یہااں 

ہو چکا کام توانائی کا 

محتسب عذر بہت ہیں لیکن 

اذن ہم کو نہیں گویائی کا 

ہوں گے حالیؔ سے بہت آوارہ 

گھر ابھی دور ہے رسوائی کا 

شاعر: الطاف حسین حالی

(دیوانِ حالی: مرتبہ؛ رشید حسن خان،سالِ اشاعت،1987)

Ranj   Aor    Ranj    Bhi    Tanhaai    Ka

Waqt    Pahuncha    Miri    Ruswaai   Ka

Umr    Shayad    Na    Karay    Aaj   Wafa

Kaatna    Hay    Shab -e- Tanhaai    Ka

Tum    Nay    Kiun   Wasl    Men    Pehlu   Badla

Kiss    Ko    Daawa     Hay    Shakaibaai    Ka

Aik    Din    Raah    Par    Ja    Pahunchay   Ham

Shaoq   Tha    Baadya    Paimaai    Ka

Uss    Say    Nadaan    Hi    Ban    Kar   Miliay

Kuch    Ajaara    Nahen    Daanaai    Ka

Saat     Pardon    Men    Nahen    Thehrti    Aankh

Hosla    Kaya    Hay   Tamashaai   Ka

Darmiyaan    Paa-e- Nazar    Hay    Jab   Tak

Ham    Ko    Daawa    Nahen    Beenaai   Ka 

Kuch    To    Hay    Qadr    Tamashaai    Ki

Hay    Jo    Yeh    Shaoq    Khud    Araai    Ka

Uss    Ko    Chhorra    To    Hay    Lekin    Ay    Dil

Mujh    Ko     Dar    Hay    Tiri    Khudaraai    Ka

Bazm-e- Dushman    Men    Na    Ji     Say   Utra

Poochna    Kaya    Tiri    Zaibaai    Ka

Yahi     Anjaam    Tha    Ay     Fasl-e- Khizaan

Gul -o-Bulbul     Ki     Shanasaai     Ka

Madad     Ay     Jazba-e- Taofeeq     Keh    Yahan

Ho    Chuka     Kaam     Tawanaai    Ka

Mohtasib    Uzr     Bahut    Hen     Lekin

Izn      Ham     Ko     Nahen     Goyaai     Ka

Hon     Gay    HALI     Say     Bahut     Awaara

Ghar     Abhi     Door      Hay     Ruswaai    Ka

Poet: Altaf      Hussain    Hali

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -