دل سے خیالِ دوست بھلایا نہ جائے گا  | الطاف حسین حالی|

دل سے خیالِ دوست بھلایا نہ جائے گا  | الطاف حسین حالی|
دل سے خیالِ دوست بھلایا نہ جائے گا  | الطاف حسین حالی|

  

دل سے خیالِ دوست بھلایا نہ جائے گا 

سینے میں داغ ہے کہ مٹایا نہ جائے گا 

تم کو ہزار شرم سہی مجھ کو لاکھ ضبط 

الفت وہ راز ہے کہ چھپایا نہ جائے گا 

اے دل رضائے غیر ہے شرط رضائے دوست 

زنہار بار عشق اٹھایا نہ جائے گا 

دیکھی ہیں ایسی ان کی بہت مہربانیاں 

اب ہم سے منہ میں موت کے جایا نہ جائے گا 

مے تند و ظرف حوصلۂ اہل بزم تنگ 

ساقی سے جام بھر کے پلایا نہ جائے گا 

راضی ہیں ہم کہ دوست سے ہو دشمنی مگر 

دشمن کو ہم سے دوست بنایا نہ جائے گا 

کیوں چھیڑتے ہو ذکر نہ ملنے کا رات کے 

پوچھیں گے ہم سبب تو بتایا نہ جائے گا 

بگڑیں نہ بات بات پہ کیوں جانتے ہیں وہ 

ہم وہ نہیں کہ ہم کو منایا نہ جائے گا

ملنا ہے آپ سے تو نہیں حصر غیر پر 

کس کس سے اختلاط بڑھایا نہ جائے گا 

مقصود اپنا کچھ نہ کھلا لیکن اس قدر 

یعنی وہ ڈھونڈتے ہیں جو پایا نہ جائے گا 

جھگڑوں میں اہل دیں کے نہ حالیؔ پڑیں بس آپ 

قصہ حضور سے یہ چکایا نہ جائے گا 

شاعر: الطاف حسین حالی

(دیوانِ حالی: مرتبہ؛ رشید حسن خان،سالِ اشاعت،1987)

Dil     Say     Khayaal -e-  Dost     Bhulaaya    Na    Jaaey   Ga

Seenay     Men    Daagh    Hay    Keh    Mittaaya    Na     Jaaey   Ga

Tum    Ko    Hazaar    Sharm    Sahi    Mujh    Ko    Laakh    Zabt

Ulfat    Wo    Raaz    Hay    Keh    Chhupaaya    Na     Jaaey    Ga

Ay    Dil    Razaa -e- Ghair    Hi     Shart -e- Raza -e- Dost

Zunhaar    Bar-e- Eshq    Uthaaya    Na    Jaaey    Ga

Dekhi    Hen    Aisi    Un    Ki    Bahut    Mehrbaniyaan

Ab    Ham    Ko    Munh    Men    Maot    K     Jaaya    Na    Jaaey   Ga

May     Tand -o-Zarf -e- Hosla -e- Ehl-e- Bazm   Tang

Saaqi    Say    Jaam    Bhar    K    Pilaaya    Na     Jaaey   Ga

Raazi    Hen     Ham    Keh    Dost    Say    Ho    Dushmani    Magar

Dushman    Ko    Ham    Say    Dost    Banaaya    Na     Jaaey   Ga

Kiun    Chhairrtay    Ho    Zikr    Na    Milnay    Ka    Raat   K

Poochhen    Gay    Wo    Sabab    To    Bataaya   Na     Jaaey    Ga

Bigrren    Na     Baat    Baat     Pe    Kiun    Jaantay    Hen    Wo

Ham    Wo    Nahen     Keh    Ham    Ko    Manaaya    Na    Jaaey   Ga

Milna    Hay    Aap    Say    To    Nahen    Hasr    Ghair   Par

Kiss    Kiss   Say    Ikhtilaat    Barrhaya    Na    Jaaey   Ga

Maqsood    Apna     Kuch    Na    Khula   Lekin    Iss    Qadar

Yaani   Wo    Dhoodtay    Hen    Jo    Paaya    Na    Jaaey    Ga

Jhagrron    Men    Ehl-e-Deen    K    Na    HALI    Parren    Bass   Aap

Qissa    Huzoor    Say   Yeh    Chukaaya   Na    Jaaey    Ga

Poet: Altaf      Hussain     Hali

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -