گو جوانی میں تھی کج رائی بہت   | الطاف حسین حالی|

گو جوانی میں تھی کج رائی بہت   | الطاف حسین حالی|
گو جوانی میں تھی کج رائی بہت   | الطاف حسین حالی|

  

گو جوانی میں تھی کج رائی بہت 

پر جوانی ہم کو یاد آئی بہت 

زیرِ برقع تو نے کیا دکھلا دیا 

جمع ہیں ہر سو  تماشائی بہت 

ہٹ پہ اُس کی اور پس جاتے ہیں دل 

راس ہے کچھ اس کو خود رائی بہت 

سرو   یا   گل آنکھ میں جچتے نہیں 

دل پہ ہے نقش اس کی رعنائی بہت 

چور تھا زخموں میں اور کہتا تھا دل 

راحت اس تکلیف میں پائی بہت 

آ رہی ہے چاہِ یوسف سے صدا 

دوست یاں تھوڑے ہیں اور بھائی بہت 

وصل کے ہو ہو کے ساماں رہ گئے 

مینہ نہ برسا اور گھٹا چھائی بہت 

جاں نثاری پر وہ بول اُٹھے مری 

ہیں فدائی کم تماشائی بہت 

ہم نے ہر ادنیٰ  کو اعلیٰ  کر دیا 

خاکساری اپنی کام آئی بہت 

کر دیا چپ واقعاتِ دہر نے 

تھی کبھی ہم میں بھی گویائی بہت 

گھٹ گئیں خود تلخیاں ایام کی 

یا گئی کچھ بڑھ شکیبائی بہت 

ہم نہ کہتے تھے کہ حالیؔ چپ رہو 

راست گوئی میں ہے رسوائی بہت 

شاعر: الطاف حسین حالی

(دیوانِ حالی: مرتبہ؛ رشید حسن خان،سالِ اشاعت،1987)

Go   Jawaani    Men    Thi    Gaj Raai    Bahut

Par    Jawaani    Ham    Ko    Yaad    Aai    Bahut

Zer-e- Burqa    Tu   Nay    Kaya    Dikhla    Diya

Jamaa    Hen    Har    Su    Tamashaai    Bahut

Hitt     Pe    Uss    Ki    Aor    Piss    Jaatay    Hen   Dil

Raas    Hay    Kuch    Uss    Ko    Khudraai    Bahut

Sarv    Ya     Gull    Aankh    Men    Jachtay   Nahen

Dil    Pe    Hay    Naqsh    Uss    Ki    Raanaai    Bahut

Choor    Tha    Zakhmon    Men    Aor    Kejta    Tha    Hurr

Raahat    Iss    Takleef    Men    Paai    Bahut

Aaa    Rahi     Hay     Chah -e -YOUSAF    Say   Sadaa

Dost     Yahaan    Thorray    Hen    Aor    Bhai    Bahut

Wasl     K     Ho   Ho    K    Samaan    Reh    Gaey

Meenh    Na    Barsa     Aor    Ghataa     Chhaai    Bahut

Jaan    Nisaari    Par    Wo    Bol     Uthay    Miri

Hen     Fidaai    Kam ,   Tamashaai    Bahut

Ham    Nay    Har    Adna    Ko    Aala    Kar    Daya

Khaaksaari    Apni    Kaam    Aai    Bahut

Kar    Diya     Chup    Waqiaat -e- Dehr    Nay

Thi    Kabhi    Ham    Men     Bhi     Goyaai    Bahut

Ghatt    Gaen    Khud    Talkhiyaan    Ayyaam    Ki

Ya    Gai    Kuch     Barrh    Shakaibaai    Bahut

Ham    Na    Kehtay    Thay    Keh    HALI    Chup    Raho

Raast    Goi    Men     Hay    Ruswaai    Bahut

Poet: Altaf    Hussain     Hali

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -