”جب میرے خلاف کچھ حاصل نہیں ہوا تو ۔۔۔“ایف آئی اے دفتر میں طلبی ، جہانگیر ترین نے خاموشی توڑ دی ، خود میدان میں آ گئے 

”جب میرے خلاف کچھ حاصل نہیں ہوا تو ۔۔۔“ایف آئی اے دفتر میں طلبی ، جہانگیر ...
”جب میرے خلاف کچھ حاصل نہیں ہوا تو ۔۔۔“ایف آئی اے دفتر میں طلبی ، جہانگیر ترین نے خاموشی توڑ دی ، خود میدان میں آ گئے 

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن )شوگر ملز کیس میں نیب کی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے جہانگیر ترین اور ان کے بیٹے علی ترین کو ایف آئی اے کے دفتر میں طلب کر لیا گیاہے جس پر اب پی ٹی آئی کے سینئر رہنما جہانگیر ترین کا موقف بھی سامنے آ گیاہے ۔

تفصیلات کے مطابق جہانگیر ترین نے پیغام جاری کرتے ہوئے کہا کہ جن ٹرانزیکشنز کا الزام لگایا جارہاہے وہ کئی سال پرانی ہیں ، ٹرانزیکشنز کا چینی کی قیمت میں اضافے سے کیا تعلق ہے ؟ جب میرے خلاف کچھ حاصل نہیں ہوا تو اب نئی کہانی بنائی گئی ہے ، میرے بیٹے علی ترین کو بھی بلا وجہ کیس میں گھسیٹا جارہاہے ۔

ان کا کہناتھا کہ کمیشن کا مقصد چینی کی قیمت میں اضافے کی وجہ معلوم کرنا تھا ، بے سروپا الزامات لگا کر مجھے ایف آئی اے طلب کیا جارہاہے ، ان الزامات کا چینی کی قیمت سے کوئی تعلق نہیں ہے ۔ جہانگیر ترین کا ایف آئی اے طلبی پر رد عمل دیتے ہوئے کہناتھا کہ ایف آئی اے کے الزامات بے بنیاد اور جھوٹ پر مبنی ہیں ، میرے متعلق کہانی بنا کر خود ساختہ کیس بنایا گیا ، اس کیس کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں ہے ۔

نیب کی جانب سے شوگر کیس کی تحقیقات کے لئے تشکیل دی گئی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین کو طلب کرلیا ہے، انہیں 19 ستمبر کوایف آئی اے دفتر لاہور میں طلب کیا گیا ہے، جب کہ ان کے بیٹے علی ترین کو بھی 20 ستمبر کو طلب کیا گیا ہے۔

نجی ٹی وی ایکسپریس نیوز نے ذرائع کے حوالے سے کہاہے کہ جہانگیرترین سے جے کے ٹی فارمنگ کے اثاثے خریدنے کی تفصیلات طلب کی ہیں، اور ان کوجاری نوٹس میں تمام ضروری دستاویزات ساتھ لانےکی ہدایت کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ جہانگیرترین اور علی ترین ذاتی حیثیت میں پیش ہوں۔ذرائع کے مطابق جہانگیر ترین پر 15 ارب روپے سے زائد کے کارپوریٹ فراڈ کا الزام ہے، تحقیقاتی ٹیم جہانگیرترین کے خلاف4 بڑے الزامات کی تحقیقات کررہی ہے، ان پر یہ الزامات شوگر کمیشن نے اپنی رپورٹ میں لگائے تھے۔

مزید :

قومی -