سنگ جب آئینہ دکھاتا ہے | امید فاضلی|

سنگ جب آئینہ دکھاتا ہے | امید فاضلی|
سنگ جب آئینہ دکھاتا ہے | امید فاضلی|

  

سنگ جب آئینہ دکھاتا ہے

تیشہ کیا کیا نظر چراتا ہے

سلسلہ پیاس کا بتاتا ہے

پیاس دریا کہاں بجھاتا ہے

ریگ زاروں میں جیسے تپتی دھوپ

یوں بھی اس کا خیال آتا ہے

سن رہا ہوں خرامِ عمر  کی چاپ

عکسِ آواز   بنتا  جاتا ہے

اک نظر سے طلمِ ماہ و سال

ایک لمحہ  میں ٹوٹ جاتا ہے

اور ذہنوں میں پھر یہی لمحہ

مدتوں تک دیِِے جلاتا ہے

حرف احساس کی حرارت سے

ایک زندہ وجود پاتا ہے

وہ بھی کیا شخص ہے کہ پاس آ     کر

فاصلہ دُور تک بچھاتا ہے

گھر تو ایسا کہاں تھا لیکن

در بدر ہیں تو یاد آتا ہے

 بجھتی آنکھوں میں کون یہ امید

رَت جگوں کے دیِے جلاتا ہے

شاعر:ا مید فاضلی

(شعری مجموعہ:دریا آخر دریا ہے،سالِ اشاعت،1979)

Sang    Jab     Aaina   Dikhaata   Hay

Teesha    Kaya    Kaya    Nazar    Churaata   Hay

Silsila    Payaas    Ka    Bataata   Hay

Payaas    Darya    Kahan    Bujhaat   Hay

Reg    Zaaron    Men    Jaisay    Tapti    Dhoop

Yun    Bhi    Uss    Ka    Khayaal    Aata    Hay

Sun    Raha    Hun    Kharaam -e- Umr    Ki    Chaap

Ask    Awaaaz    Banat    Jaata    Hay

Ik    Nazar    Say   Talism -e- Maah -o- Saal

Aik    Lamha    Men    Toot    Jaata   Hay

Aor    Zehnon    Men    Phir    Yahi    Lamha

Mudaton    Tak    Diay    Jalaata    Hay

Harf     Ehsaas    Ki    Haraarat   Say

Aik    Zinnda    Wajood    Paata   Hay

Wo    Bhi    Kaya     Shakhs    Hay    Keh    Paas    Aa    Kar

Faaslay     Door   Tak    Bichaata   Hay

Ghar    To   Aisa    Kahan    Tha     Lekin

Dar    Badar    Hen   To   Yaad    Aata   Hay

Bujhti    Aankhon    Men    Kon    Yeh     Ummmeed

Rat    Jagon    K    Diay    Jalaata    Hay

Poet : Ummeed Fazli

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -