جانے یہ کیسا زہر  دِلوں میں اُتر گیا | امید فاضلی|

جانے یہ کیسا زہر  دِلوں میں اُتر گیا | امید فاضلی|
جانے یہ کیسا زہر  دِلوں میں اُتر گیا | امید فاضلی|

  

جانے یہ کیسا زہر  دِلوں میں اُتر گیا

پرچھائیں زندہ رہ گئی انسان مر گیا 

بربادیاں تو میرا مقدر ہی تھیں مگر 

چہروں سے دوستوں کے ملمع اتر گیا 

اس شہر میں خراج طلب ہے ہر ایک راہ

وہ خوش نصیب تھا جو سلیقے سے مر گیا

اے دوپہر کی دھوپ بتا کیا جواب دوں 

دیوار پوچھتی ہے کہ سایہ کدھر گیا 

جانے وہ مجھ مٰیں کون تھا جو میرے ساتھ ساتھ

بیدار ہو کے خواب کی صورت بکھر   گیا

یہ موجِ خوں تو سر سے گزرنی ہی تھی مگر

آئندگاں  کی سوچ کا چہرہ نکھر گیا

اے شعلۂ وجود  کوئی  صورتِ نمود

ذروں کو یہ گماں کہ سورج بکھر گیا

کیا کیا نہ اس کو  نازِ مسیحائی تھا امیدؔ 

ہم نے دکھائے زخم تو چہرہ اتر گیا 

شاعر: امید فضلی

(شعری مجموعہ:دریا آخر دریا ہے،سالِ اشاعت،1979)

Jaanay    Yeh    Kaisa    Zehr    Dilon    Men    Utar   Gaya

Parachhaaen    Zinda    Reh    Gaen    Insaan    Mar   Gaya

Barbaadiyaan    To    Mera    Muqaddar    Hi    Then    Magar

Chehron     Say     Doston    K    Malamma    Utar    Gaya

Iss    Shehr    Men    Kharaaj    Talab    Hay    Har     Aik     Raah

Wo     Khushnaseeb    Tha    Jo    Saleeqay    Say     Mar    Gaya

Ay    Dopahar    Ki     Dhoop     Bata    Kaya     Jawaab    Dun

Dewaar    Poochhti    Hay    Keh    Saaya    Kidhar    Gaya

Jaanay    Wo    Mujh    Men    Kon    Tha    Jo    Meray    Sath    Saath

Bedaar    Ho    K    Khaab    Ki    Soorat     Bikhar     Gaya

Yeh     Maoj -e- Khoon    To    Sar    Say   Guzarni    Hi    Thi    Magar

Aaindgaan     Ki     Soch    Ka    Chehra    Nikhar    Gaya

Ay     Shola -e- Wajood    Koi     Soorat -e- Namood

Zarron    Ko    Yeh    Gumaan    Hay    Keh    Sooraj      Bikhar    Gaya

Kaya    Kaya   Na    Uss    Ko    Naaz -e- Masihaai    Tha    UMMEED

Ham    Nay     Dikhaaey    Zakhm    To    Chehra     Utar     Gaya

Poet: Ummeed      Fazli

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -